’کارروائی خوش آئند ہے‘ پاکستان

فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ FO
Image caption دفترِ خارجہ کی ترجمان کا کہنا تھا کہ بھارت میں ایسے افراد کو بھی حراست میں لیا ہوا ہے جن کی قومیت کا تعین ہونا ابھی باقی ہے۔

دفترِ خارجہ کی ترجمان تہمینہ جنجوعہ نے بھارتی سپریم کورٹ کی طرف سے بھارت کی جیلوں میں پاکستانی قیدیوں کے بارے میں کارروائی کو خوش آئند قرار دیا ہے۔

ہمارے نامہ نگار شہزاد ملک سے گفتگو کرتے ہوئے اُنہوں نے کہا کہ اس سال جولائی میں بھارت اور پاکستان کے وزراء خارجہ کے درمیان ہونے والی ملاقات میں طے کیا گیا تھا کہ دونوں ملکوں کی جیلوں میں بند قیدیوں کے معاملات کو انسانی ہمدردی کی بنیاد پر ترجیحی بنیادوں پر حل کیا جائے۔

اُنہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ میں درخواست گُزار کی طرف سے جو پاکستانی قیدیوں کی فہرست پیش کی گئی ہے وہ اُس فہرست سے مختلف ہے جو پاکستان نے تیار کی ہے تاہم اُنہوں نے یہ نہیں بتایا کہ اس سرکاری طور پر تیار کردہ فہرست میں بھارت میں قید پاکستانی قیدیوں کی تعداد زیادہ ہے کہ کم۔

ایک سوال کے جواب میں دفترِ خارجہ کی ترجمان کا کہنا تھا کہ بھارت میں ایسے افراد کو بھی حراست میں لیا ہوا ہے جن کی قومیت کا تعین ہونا ابھی باقی ہے اور قومیت کا تعین ہونے کے بعد قانونی کارروائی کی جاتی ہے۔