سپریم کورٹ میں نئے ججوں کا تقرر

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption سپریم کورٹ سے چھ جج ریٹائر ہوئے ہیں

پاکستان کے صدر آصف علی زرداری نے پشاور اور لاہور ہائی کورٹس کے چیف جسٹس صاحبان اور سندھ ہائی کورٹ کے ایک سینیئر جج کو سپریم کورٹ کا جج مقرر کر دیا ہے۔

جن جج صاحبان کو سپریم کورٹ کا جج بنایا گیا ہے ان میں جسٹس اعجاز افضل خان، جسٹس اعجاز احمد چوہدری اور جسٹس گلزار احمد شامل ہیں۔

صدارتی ترجمان فرحت اللہ بابر کے مطابق جوڈیشل کمیشن آف پاکستان نے ان تینوں جج صاحبان کے علاوہ سندھ ہائی کورٹ سے حال ہی میں ریٹائر ہونے والے جسٹس محمد اطہر سعید کو سپریم کورٹ میں بطور جج تقرری کے لیے نامزد کیا تھا۔

انہوں نے بتایا کہ جب پارلیمانی کمیٹی نے ان نامزدگیوں پر غور کیا تو جسٹس اطہر سعید کی تقرری کے بارے میں کارروائی مکمل نہیں ہوسکی تھی اور ان کے معاملے میں آئین کے آرٹیکل ایک سو پچھہتر کی بارہویں شق لاگو ہوگی۔

صدارتی ترجمان کے مطابق صدرِ پاکستان نے وزیراعظم کی تجویز پر لاہور ہائی کورٹ کے جج جسٹس شیخ عظمت سعید کو چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ اور پشاور ہائی کورٹ کے سینیئر جج جسٹس دوست محمد خان کو پشاور ہائیکورٹ کا چیف جسٹس مقرر کیا ہے۔

لاہور اور پشاور ہائیکورٹ کے چیف جسٹسز کے عہدے موجودہ چیف جسٹس صاحبان کے سپریم کورٹ کا جج بننے کے بعد خالی ہوجائیں گے۔

صدر کی جانب سے سپریم کورٹ میں نئی تقرریاں عدالتِ عظمٰی سے ریٹائر ہونے والے ججوں کی جگہ کی گئی ہیں۔

ریٹائر ہونے والے جج صاحبان میں جاوید اقبال، راجہ فیاض، رحمت حسین جعفری اور محمود اختر شاہد صدیقی شامل ہیں جبکہ جسٹس خلیل الرحمن رمدے اور جسٹس غلام ربانی ایڈہاک جج کے طور پر ریٹائر ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں