سلالہ چیک پوسٹ: فلیگ میٹنگز ہوتی رہی ہیں

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

قبائلی علاقے مہمند ایجنسی میں سنیچر کو نیٹو فورسز کے حملے میں نشانہ بننے والے علاقے میں پاکستان ،افغانستان اور نیٹو فورسز کے درمیان فلیگ میٹنگز بھی ہوتی رہی ہیں۔

مہمند ایجنسی کے صدر مقام غلنئی کے شمال مغرب میں تقریباً پچاس کلومیٹر دور، سلالہ کا علاقہ ایک دور دراز پہاڑی پر واقع ہے۔ بیزئی سب ڈویژن کی حدود میں پانچ چھ مربہ کلومیٹر پر پھیلا ہوا۔ یہ علاقہ انکارگئی کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ یہ ایک پہاڑی وادی ہے جو افغانستان کے سرحدی صوبے کنڑ سے متصل ہے۔

اس علاقے میں چند ماہ قبل ہی شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کے بعد پاکستانی فوج نے دو سکیورٹی چیک پوسٹیں قائم کی تھیں۔ اس علاقے میں خواگا خیل قبیلے کے افراد رہائش پذیر ہیں اور زیادہ تر کھیتی باڑی کا کام کرتے ہیں۔ دشوار گزار پہاڑی سلسلہ ہونے کی وجہ سے اس علاقہ میں بنیادی سہولیات کا شدید فقدان پایا جاتا ہے۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ اس علاقے میں پانی کی شدید قلت ہے اور وہ چشموں کے پانی کو پینے کے لیے استعمال کرتے ہیں جس کےلیے انہیں دور دراز علاقوں میں جانا پڑتا ہے۔

خواگا خیل قبیلے کی ایک بااثر سیاسی شخصیت اور سابق صوبائی وزیر افتخار مہمند کا کہنا ہے کہ جس جگہ پر حملہ ہوا ہے اس کے آس پاس سات آٹھ کلومیٹر کا قریبی علاقہ پاکستان کی حدود میں شامل تھا لیکن کچھ عرصے سے یہ افغانستان کا علاقہ سمجھا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس سرحدی مقام پر افغانستان کی طرف علاقہ شورا کہلاتا ہے جبکہ پاکستان کا علاقہ پتھاؤ یعنی ’سورج کی طرف‘ کے نام سے موسوم ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس کے قبیلے کے افراد افغانستان کی حدود کے پار، پانچ کلومیٹر کے فاصلے پر رہ رہے ہیں لیکن وہ سب خود کو پاکستانی سمجھتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان بننے کے بعد خواگا خیل واحد قبیلہ تھا جس نے بغیر کسی شرط کے پاکستان سے الحاق کا فیصلہ کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ اس علاقے کے عوام دونوں ممالک کی حکومتوں سے نالاں ہیں۔

پاکستان اور افغانستان کے مابین سرحدی حدبندی ہمیشہ سے ایک بڑا تنازعہ رہا ہے بالخصوص مہمند اور باجوڑ ایجنسیوں کا علاقہ جہاں دونوں ممالک ایک دوسرے پر قبضہ کرنے کے الزامات بھی لگاتے رہے ہیں۔

تقریباً چوبیس سو کلومیٹر پر مشتمل پاک افغان سرحد، جو ڈیورنڈ لائن کے نام سے موسوم ہے، ایک سو اٹھارہ سال قبل برِصغیر اور افغانستان کی حکومتوں کے درمیان ایک بین الاقوامی سرحد کے طورپر قائم کی گئی تھی۔

کابل میں پاکستان کے سابق سفیر رستم شاہ مہمند کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کے خلاف جاری جنگ کے بعد ڈیورنڈ لائن کا کسی نہ کسی حد تک تعین کیا گیا ہے لیکن پھر بھی اکثر اوقات مسائل سامنے آتے رہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سلالہ چیک پوسٹ پر اس سے پہلے پاکستان، افغانستان اور نیٹو فورسز کے درمیان باقاعدہ فلیگ میٹنگز ہوتی رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ امریکیوں کے پاس سرحد پر تمام تر سہولیات موجود ہیں، ان کے پاس نقشے ہیں اور ریڈار کا نظام موجود ہے لیکن اس کے باوجود انہوں نے غیر ذمہ داری کا مظاہرہ کیا اور بلا اشتعال پاکستانی پوسٹوں پر بمباری کی۔

انہوں نے کہا ’یہ بات نہیں کہ امریکیوں نے قصداً پاکستانی فورسز کو نشانہ بنایا ہوگا لیکن یہ بات حقیقت پر مبنی ہے کہ انہوں نے احتیاط سے کام نہیں لیا۔‘

ان کے مطابق اس واقعہ کا افسوسناک پہلو یہ ہے کہ امریکی اور نیٹو فورسز نے جس طرح حملہ کیا ہے اس تو یہ لگتا ہے کہ وہ بڑی تیاری کے ساتھ اس حملے کےلیے آئے تھے۔

اسی بارے میں