’شہباز تاثیر کی رہائی کیلیے مذاکرات جاری‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption پنجاب کے سابق مقتول گورنر سلمان تاثیر کے بیٹے شہباز تاثیر کو اس سال اگست میں لاہور سے اغواء کیا گیا تھا

پنجاب کے وزیر قانون رانا ثناء اللہ خان نے دعویٰ کیا ہے کہ پولیس نے امریکی شہری وارن وائن سٹائن اور سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے بیٹے شہباز تاثیر کے اغواء میں ملوث دہشت گردوں کو گرفتار کرلیا ہے۔

انہوں نے یہ دعویٰ بدھ کو پنجاب اسمبلی کے باہر صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔

صوبائی وزیر قانون رانا ثناء اللہ خان نے بتایا کہ پولیس نےچند دہشت گرد پکڑے ہیں جن میں وہ دہشت گرد بھی شامل ہیں جنہوں نے سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے بیٹے شہباز تاثیر کو اغواء کرنے میں مدد فراہم کی تھی۔

اس سال جنوری میں سلمان تاثیر کے قتل کے بعد ان کے بیٹے شہباز تاثیر کو اگست میں لاہور میں اس وقت اغوا کیا گیا تھا جب وہ اپنے گھر سے دفتر جارہے تھے۔ اس واقعہ کے فوری بعد پنجاب حکومت کی طرف سے یہ موقف سامنے آیا تھا کہ شہباز تاثیر کو کاروباری لین دین کے سلسلے میں اغوا کو خارج الامکان قرار نہیں دیا جاسکتا۔

تاہم اب وزیر قانون رانا ثناء اللہ نے دعویْ کیا ہے کہ شہباز تاثیر کے اغوا میں ملوث دہشت گرد گروہ کو پکڑلیا گیا ہے۔

صوبائی وزیر قانون کے بقول اس وقت امریکی شہری اور شہباز تاثیر پاک افغان سرحد کے قریبی علاقوں میں ہیں اور اُن کی رہائی کے لیے مذاکرات ہو رہے ہیں۔

رانا ثنااللہ کا کہنا تھا کہ شہباز تاثیر اور امریکی شہری وارن وائن سٹائن کے بارے میں تمام تفتیش مکمل کی جا چکی ہے اور انہوں نے اس امید کا اظہار کیا کہ انہیں جلد باحفاظت بازیاب کروا لیا جائے گا۔

پنجاب کے وزیر قانون کا کہنا تھا کہ پولیس کی مؤثر حکمت عملی اور دہشت گردوں کی گرفتاریوں کی باعث پچھلے کچھ عرصہ میں دہشت گردی کے واقعات میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔

ادھر مقامی ٹی وی چینل دنیا نیور سے بات کرتے ہوئے آئی جی پولیس پنجاب جاوید اقبال نے بتایا کہ شہباز تاثیر ، امریکی شہری اور سابق چیئرمین جوائنٹ چیف آف سٹاف جنرل طارق مجید کے داماد عامر ملک کو ایک ہی جہادی گروپ نے اغوا کیا ہے تاہم انہوں نے جہادی گروپ کا نام ظاہر نہیں کیا۔

آئی جی پولیس کے مطابق اغوا کاروں نے تین مغویوں کی رہائی کے لیے بھاری تاوان کے علاوہ دیگر مراعات بھی مانگی ہیں۔

امریکی شہری وارن وائن سٹائن کو اسی سال تیرہ اگست کو ان کی ماڈل ٹاؤن کے علاقے میں واقع رہائش گاہ سے اغوا کیا گیا تھا اور القاعدہ کے رہنما ایمن اظواہری نے کہا تھا کہ وارن رائن سٹائن ان کے قبضے میں ہے ۔

ایمن الظواہری نے کہا تھا کہ وارن وائن سٹائن کو اس شرط پر رہا کیا جائے گا کہ امریکہ افغانستان اور پاکستان میں فضائی حملے بند کرے اور اسامہ بن لادن کے رشتہ داروں سمیت دنیا بھر سے گرفتار کیے گئے کئی قیدیوں کو رہا کر دے۔

جنرل طارق مجید کے داماد عامر ملک کو ابھی اس سال اغوا کیا گیا تھا۔

اسی بارے میں