’پہلے اور تیسرے حملے میں برابر کا جانی نقصان ہوا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP Getty

سینٹرل کمانڈ کی جانب سے سلالہ چیک پوسٹ پر حملے کی تحقیقاتی رپورٹ میں ان سوالات کے جوابات بھی دیے گئے ہیں جو پاکستانی فوج نے اٹھائے تھے۔

پاکستانی فوج کی جانب سے اٹھائے گئے سوالات اور جوابات مندرجہ ذیل ہیں۔

سوال: کیا آئساف نے اس آپریشن کے بارے میں پاکستانی فوج کو مطلع کیا تھا؟

ا‌) مختصراً، نہیں۔

ب‌) سپیشل آپریشنز ٹاسک فورس نے درخواست کی تھی کہ پاکستانی فوج کو مطلع کیا جائے۔ تاہم رابطے کا عمل منقطع ہو گیا اس آپریشن کے بارے میں اطلاع اتحادی فوج کے سرحدی رابطہ دفتر تک نہ پہنچ سکی۔

سوال: کیا آئساف نے اس جگہ کے کوارڈینیٹس غلط دیے جہاں لڑائی ہو رہی تھی یا جہاں سے فائر کیا جا رہا تھا؟

ا‌) ٹاسک فورس کے کپتان نے آئساف کے رابطہ افسر کو اس جگہ کے کوارڈینیٹس دیے تھے اور کہا تھا کہ ان کوارڈینیٹس کو پاکستانی فوج کے رابطہ افسر کے ساتھ شیئر نہ کیا جائے اور اس کی بجائے عمومی پوزیشن بتا دی جائے۔

ب‌) آئساف کے زیرِ استعمال سافٹ ویئر میں غلطی تھی جس کے باعث پاکستانی فوج کے رابطہ افسر کے زیرِ استعمال نقشے میں اس آپریشن کی جگہ اصل جگہ سے چودہ کلومیٹر دور دکھائی دی۔

ت‌)پاکستانی فوج کے رابطہ افسر نے یہ غلط لوکیشن اپنے ہیڈ کوارٹر بھجوائی۔

سوال: کیا پاکستانی فوج نے اپنی چوکیوں کے کوارڈینیٹس دیے یا غلط کوارڈینیٹس دیے؟

ا‌) آخری بار فروری دو ہزار گیارہ کو سرحدی چوکیوں کی معلومات کو اپ ڈیٹ کیا گیا۔

ب‌) اس نقشے کو اس آپریشن کے حوالے سے اتحادی سرحدی رابطہ کار کے دفتر میں لگایا گیا جس کو امریکی ایجنسی نے جون 2011 کو چھاپہ تھا۔

ت‌) آئساف کے رابطہ افسر آپریشن کے کوارڈینیٹس زبانی طور پر پاکستانی رابطہ افسر کو بتاتے ہیں جو یہ کوارڈینیٹس گالکن ویو سسٹم میں ڈالتے ہیں اور بتاتے ہیں کہ اس علاقے میں چوکی ہے یا نہیں۔

سوال: آئساف کو یہ کیسے معلوم ہوا کہ اس علاقے میں سرحدی چوکی نہیں ہے؟

ا‌) پاکستانی فوج نے ان تین چوکیوں کی معلومات فراہم نہیں کی تھیں۔

ب‌) اس آپریشن کی منصوبہ بندی کے دوران کسی چوکی کی نشاندہی نہیں کی گئی تھی۔

ت‌)اس آپریشن سے قبل ریجنل کمانڈ کی جانب سے فراہم کی گئی انٹیلیجنس معلومات کے مطابق آپریشن کے علاقے کے شمال اور جنوب میں ممکنہ چوکیوں کا ذکر کیا گیا تھا۔

ث‌) جہاز کے عملے کو آپریشن سے قبل دی گئی معلومات میں بھی چوکیوں کا نشاندہی نہیں کی گئی تھی کیونکہ معلومات کے مطابق چوکیاں اس علاقے میں نہیں تھیں۔

ج‌) جہاز کے عملے نے بتایا کہ سینسرز میں دیکھے گئے بنکرز پاکستانی فوج کی چوکیوں سے مطابقت نہیں رکھتے تھے جو انہوں نے اس سے قبل کیے گئے آپریشنز کے دوران دیکھی تھیں۔

سوال: اگر پہلا حملہ فرینڈلی فائر کا نتیجہ تھا تو دوسرے اور تیسرے حملے کی وضاحت کریں۔ اور کس حملے میں سب سے زیادہ جانی نقصان ہوا؟

ا‌) پہلا حملہ امریکی فوجی دستے پر براہِ راست فائرنگ کے نتحجے میں ہوا۔

ب‌) دوسرا حملہ امریکی فوج پر پہلے حملے کے بعد بھی فائرنگ کا سلسلہ جاری رہنے کی وجہ سے ہوا۔

ت‌) اور تیسرا حملہ اس جگہ سے کی گئی فائرنگ کے ردِ عمل میں ہوا۔

ث‌) حملے کی ویڈیو سے ملنے والے شواہد سے ظاہر ہوتا ہے کہ پہلے اور تیسرے حملے میں برابر کا جانی نقصان ہوا۔

اسی بارے میں