صرف پارلیمان کو جوابدہ ہوں: گیلانی

یوسف رضا گیلانی اور آصف زرداری تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption صدارتی ترجمان نے اس بات کی تردید کی ہے کہ فوج کے سربراہ نے وزیرِ اعظم کے بیان پر صدر سے شکوہ کیا ہے

پاکستان کے وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی نے کہا ہے کہ وہ پارلیمان کو جوابدہ ہیں کسی فرد کو جواب نہیں دیں گے۔

پنجاب کے ضلع وہاڑی میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وزیرِاعظم اور وزراء پارلیمان کو جوابدہ ہیں اور اگر کسی کو کوئی شکایت ہوگی تو وہ کسی فرد کو نہیں پارلیمان کو جواب دیں گے۔

وزیرِ اعظم نے کہا کہ پارلیمان جب بھی چاہے گی تو وہ اپنا موقف پارلیمان کے سامنے پیش کریں گے۔

یوسف رضاگیلانی نے کہا کہ انہوں نے کبھی یہ نہیں کہا کہ وہ پانچ برس تک وزیراعظم رہیں گے ۔انہوں نے کہا کہ پارلیمان کا پانچ برس تک قائم رہنا ضروری ہے وزیر اعظم کا ضروری نہیں ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ عوام نے پارلیمان کو پانچ برس کے لیے منتخب کیا ہے اور پارلیمان اپنی مدت پوری کرے گی۔انہوں نے کہا کہ آئین کے مطابق اگر کوئی نیا وزیر اعظم آئے گا تو اس وزیر اعظم کو خوش آمدید کہیں گے۔

سید یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ ایوان صدر نے غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کی اس خبر کی تردید کی ہے کہ صدر اور آرمی چیف جنرل کیانی نے وزیر اعظم کے چین کے اخبار کو دیے گئے انٹرویو پر شکوہ کیا ہے۔

صدارتی ترجمان فرحت اللہ بابر برطانوی خبر رساں ادارے کی اس خبر کی سختی سے تردید کر چکے ہیں اور ان کے بقول یہ محض قیاس آرائی ہے۔

وزیر اعظم گیلانی نے پچھلے ہفتے آرمی چیف اور ڈی جی آئی ایس آئی کو تنقید کا نشانہ بنایا تھا کہ انہوں نے سپریم کورٹ میں خلاف قاعدہ حکومت کی منظوری کے بغیر بیانات جمع کرائے۔

جب وزیر اعظم سے پوچھا گیا کہ میبنہ میمو کے اہم کردار منصور اعجاز پاکستان پہنچ چکے ہیں تو انہوں نے اس سوال کا جواب سے دینے گزیر کیا۔