بلوچستان: انتخابی فہرستوں کی تیاری کے عمل کا بائیکاٹ

نادرا: فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ other
Image caption اس وقت نادرا کے عارضی ملازمین میں سے بارہ سو صرف بلوچستان سے ہیں

بلوچستان میں نادرا کے سینکڑوں عارضی ملازمین نے انتخابی فہرستوں کی تیاری کےعمل کا بائیکاٹ کر دیا ہے جس سے صوبے میں انتخابی فہرستوں کی تیاری متاثر ہو سکتی ہے۔

ان ملازمین نے کہا کہ جب تک انہیں مستقل نہیں کیا جائےگا اس وقت تک وہ بطور احتجاج انتخابی فہرستوں کی تیاری کا کام بند رکھیں گے۔

کوئٹہ سے بی بی سی کے نامہ نگار ایوب ترین کے مطابق بلوچستان میں (نادرا) کے عارضی ملازمین نے مستقل نہ ہونے کے خلاف منگل سے صوبہ بھر میں انتخابی فہرستوں کی تیاری کے عمل کا بائیکاٹ کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔ ملازمین کے مطابق انہیں گذشتہ دس سال سے یقین دہانیاں کرائی جا رہی ہیں کہ انہیں مستقل کیا جائے گا لیکن آج تک انکے مستقل ہونے کے احکامات جاری نہیں ہوئے۔

اس وقت پورے ملک میں نادرا کے چودہ ہزار عارضی ملازمین ہیں جن میں سے بارہ سو کا تعلق بلوچستان سے ہے۔

کوئٹہ میں نادرا کے ایک آفیسر شیریار خان کا کہنا ہے کہ پہلے مرحلے میں انہوں نے انتخابی فہرستوں کی تیاری کے عمل کا بائیکاٹ کیا ہے اور اگر تمام عارضی ملازمین کو جلد مستقل کرنے کے احکامات جاری نہ ہوئے تودوسرے مرحلے میں بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام، وطن کارڈ اور شناختی کارڈ بنانے کے عمل کو بھی بند کر دیاجائےگا۔

ایک اور آفیسر عجب خان مندوخیل نے شکایت کی وزیراعظم سے لیکر چیئرمین نادرا تک نے مختلف اوقات میں اعلانات کیے کہ نادرا کے تمام ملازمین کو جلد مستقل کیا جائےگا لیکن ان اعلانات کے باوجود آج تک کسی ملازم کے مستقل ہونے کا حکم جاری نہ ہو سکا۔

یاد رہے کہ سپریم کورٹ نے نادرا کو پورے ملک میں انتخابی فہرستوں کی تیاری کا عمل تیز کرنے کا حکم دیا ہے لیکن بلوچستان میں نادرا کے ملازمین نے بائیکاٹ کا اعلان کر دیا ہے جس سے صوبائی سطح پر انتخابی فہرستوں کی تیاری کا کام یقیناً متاثر ہو سکتا ہے۔

اسی بارے میں