کُرم: چیک پوسٹ پر حملہ، آٹھ اہلکار ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

پاکستان کے قبائلی علاقے کُرم ایجنسی میں حکام کے مطابق سکیورٹی فورسز کی چیک پوسٹ پر شدت پسندوں کے حملے میں آٹھ اہلکار ہلاک جبکہ پچیس زخمی ہوگئے ہیں۔

کُرم ایجنسی میں ایک اعلیٰ سرکاری اہلکار نے بی بی سی کے نامہ نگار دلاورخان وزیر کو بتایا کہ منگل کو وسطی کُرم کے علاقے جوگی میں ایک سو سے زیادہ مُسلح شدت پسندوں نے چیک پوسٹ پر حملہ کیا۔

انہوں نے کہا کہ سکیورٹی فورسز کی جوابی کارروائی میں بیس سے زیادہ شدت پسند مارے گئے جن میں بعض کا تعلق تحریک طالبان پاکستان سے بتایا جاتا ہے۔ اہلکار کے مطابق اہلکاروں نے کئی گھنٹوں تک مقابلہ کیا۔

حکام کے مطابق اس علاقے کو طالبان کا گڑھ سھجھا جاتا ہے جہاں شدت پسندوں کے درجنوں مُشتبہ ٹھکانے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حملے کے بعد شدت پسند اپنے ساتھیوں کی لاشوں کو بھی اپنے ساتھ لے گئے۔

اہلکار کے مطابق شدت پسندوں کے حملے میں چیک پوسٹ کو بھی کافی نقصان پہنچا ہے۔ اس چیک پوسٹ کو ایک ہفتہ قبل ہی قائم کیاگیا تھا۔

منگل کو حملے کا نشانہ بننے والی چیک پوسٹ اس علاقے میں واقع ہے جہاں سکیورٹی فورسز نے شدت پسندوں کے خلاف کارروائی شروع کر رکھی ہے اور شدت پسندوں کے کئی اہم ٹھکانوں کو تباہ کیاگیا ہے۔

یاد رہے کہ کُرم ایجنسی گزشتہ ایک عرصے سے شدت پسندوں کے نرغے میں ہے۔ ایک طرف شدت پسندوں اور سکیورٹی فورسز کے درمیان جھڑپیں ہورہی ہیں اوردوسری طرف فرقہ وارانہ کارروائیوں سے کُرم ایجنسی میں زندگی بیشتر سرگرمیاں ماند پڑ گئی ہیں۔

اسی بارے میں