ڈیرہ بگٹی: قافلے پر حملہ، دو اہلکار ہلاک

فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ AFP

بلوچستان کے علاقے ڈیرہ بگٹی میں نامعلوم مسلح افراد نے فرنٹیئرکور کے ایک قافلے پر حملہ کیاہے جس کے نتیجے میں ایف سی کے دو اہلکار ہلاک اورآٹھ زخمی ہو گئے ہیں۔

کوئٹہ سے بی بی سی کے نامہ نگار ایوب ترین کے مطابق سنیچر کے روز فرنٹیئرکور کا ایک قافلہ ڈیرہ بگٹی شہر سے سنگسیلا کی طرف جارہاتھا کہ راستے میں پہلے سے تاک لگائے ہونے نامعلوم مسلح افراد نے قافلے پر خود کار ہتھیاروں سے حملہ کیا۔ حملے کے نتیجے میں ایف سی کے دواہلکار ہلاک اور آٹھ زخمی ہو گئے ہیں۔

کوئٹہ میں ایف سی کے ذرائع نے حملے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا ہے کہ حملے کے بعد زخمیوں کو فوری طور پر علاج کے لیے سوئی منتقل کردیاگیا جہاں بعض زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے۔

تاہم ڈیرہ بگٹی سے مقامی صحافیوں کے مطابق حملے کے بعد سیکورٹی فورسز کی ایک بڑی تعداد نے جائے وقوعہ پر پہنچ کر نہ صرف علاقے کی ناکہ بندی کردی ہے بلکہ ملزمان کی تلاش کے لیے مختلف مقامات پر چھاپے مارنے کا سلسلہ بھی شروع کر دیا ہے۔ تاہم آخری اطلاعات کے مطابق کوئی گرفتاری عمل میں نہیں آئی تھی اور نہ کسی نے تاحال اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

خیال رہے کہ اس سے قبل بلوچستان کے سب سے شورش زدہ ضلع ڈیرہ بگٹی میں سیکورٹی فورسز پر حملوں اور گیس کی تنصیبات کوتباہ کرنے کے کئی واقعات کی ذمہ داری بلوچ ری پبلیکن آرمی نے قبول کی ہے۔

بلوچ ری پبلیکن آرمی بلوچ قوم پرست سردار نواب محمد اکبر خان بگٹی کی ہلاکت کے بعد اس علاقے میں سرگرم عمل ہے۔ نواب بگٹی کو سابق فوجی صدر جنرل پرویز مشرف کے دورِ حکومت میں بلوچستان میں ہونے والے فوجی آپریشن کے دوران چھبیس اگست سنہ دو ہزار چھ کو ہلاک کیا گیا تھا۔

اسی بارے میں