’پولیو کے خلاف مہم پر عدم اطمینان‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان کے وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی نے ملک بھر کے سڑسٹھ اضلاع میں پولیو کے قطرے پلانے کی مہم پر عدم اطمینان کا اظہار کیا ہے۔

وزیراعظم نے متعلقہ حکام کو ہدایت کی ہے کہ بارہ مارچ سے شروع ہونے والی مہم میں تمام بچوں کو پولیو کے قطرے پلانے کو یقینی بنایا جائے۔

منگل کو ’وزیراعظم کے پولیو مانیٹرنگ اینڈ کوآرڈینیشن سیل‘ سے جاری ہونے والے بیان میں بتایا گیا ہے کہ تیس جنوری سے یکم فروری کے درمیاں ملک بھر میں پولیو کے قطرے پلانے کی جو مہم چلائی گئی اس میں سڑسٹھ اضلاع کے کئی علاقوں میں بچوں کو پولیو کے قطرے نہیں پلائے جا سکے۔

بیان میں بتایا گیا ہے کہ بارہ سے چودہ مارچ کے دوران پولیو سے بچاؤ کی جو نئی مہم شروع ہونی ہے اس میں تمام ڈپٹی کمشنرز اور ڈسٹرکٹ کوآرڈینشن افسران سے کہا گیا ہے کہ وہ اس مہم کو مؤثر بنانے کے لیے اقدامات کریں۔

اسلام آباد سے بی بی سی کے نامہ نگار اعجاز مہر کے مطابق ’دنیا میں پولیو کے خاتمے کی مہم کی مانیٹرنگ کرنے والے بورڈ‘ نے پاکستان میں پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانےکی مہم کو کمزور قرار دیتے ہوئے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ اگر اپریل تک مؤثر مہم نہ چلائی گئی تو پاکستان میں پولیو وائرس اس حد تک پھیل سکتا ہے جس پر قابو پانا ممکن نہیں ہوگا۔

وزیراعظم کے پولیو مانیٹرنگ سیل کے مطابق پاکستان میں رواں سال اب تک پولیو کے بارہ کیسز سامنے آ چکے ہیں اور خدشہ ہے کہ اس میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

بیان میں بتایا گیا ہے کہ بلوچستان کے اضلاع بارکھان، چاغی، ڈیرہ بگٹی،گوادر، ہرنائی، قلعہ عبداللہ، خصدار، قلعہ سیف اللہ، لسبیلا، لورالائی، مستونگ، موسیٰ خیل، نصیر آباد، پشین، کوئٹہ واشک، ژوب اور زیارت کی کئی یونین کونسلز میں پولیو کے قطرے پلانے کا کام پچانوے فیصد سے کم رہا۔

قبائلی علاقوں میں بھی پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے کی مہم ہدف سے کم رہی۔ جس میں خیبر، کرم، مہمند، شمالی وزیرستان، ٹانک، ایف آر لکی مروت، ایف آر کوہاٹ، اور ایف آر پشاور کے علاقے شامل ہیں۔

اس کے علاوہ ایبٹ آباد، بنیر، دیر زیریں، دیر بالا، ہنگو، لکی مروت، ملاکنڈ، مانسہرہ اور طورگڑھ کی بیس فیصد یونین کونسلز میں پولیو کے بچاؤ کے قطرے نہیں پلائے جا سکے۔

بیان میں بتایا گیا ہے کہ صوبہ پنجاب کے ضلع گجرات، حافظ آباد، جہلم، لاہور، ننکانہ صاحب، رحیم یار خان، اور ساہیوال کی دس فیصد یونین کونسلز میں بچوں کو قطرے پلانے کی مہم مؤثر ثابت نہیں ہوئی۔

جبکہ صوبہ سندھ کے اضلاع دادو، قمبر، سانگھڑ اور ٹنڈو محمد خان کی بیس فیصد یونین کونسلز میں پولیو مہم کی کوریج پچانوے فیصد سے کم رہی۔

کراچی میں بن قاسم، گڈاپ، گلبرگ، جمشید، کورنگی، لیاری، لیاقت آباد، نارتھ ناظم آباد، نارتھ کراچی، اورنگی، صدر، شاہ فیصل اور سائٹ ٹاؤنز میں بیس فیصد یونین کونسلز میں پولیو سے بچاؤ کی مہم غیر مؤثر ثابت ہوئی۔

وزیراعظم کے پولیو مانیٹرنگ اینڈ کو آرڈی نیشن سیل کے مطابق اسلام آباد میں باون فیصد یونین کونسلز میں پولیو کی مہم غیر مؤثر ریکارڈ کی گئی ہے۔

اسی بارے میں