تربت حملے میں ایف سی کے تین اہلکار ہلاک

بلوچستان: فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بلوچستان میں حالات بڑی تیزی سے خراب ہو رہے ہیں

بلوچستان کے ضلع تربت میں ایک ریمورٹ بم دھماکے میں فرنٹیئرکور کے تین اہلکار ہلاک اور دو زخمی ہو گئے ہیں۔ بلوچ لبیریشن آرمی نے حملے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔

کوئٹہ سے بی بی سی کے نامہ نگار ایوب ترین کے مطابق تربت کےعلاقے مند میں دھشت کے مقام پر جمعرات کی صبح بعض نامعلوم افراد کی جانب سے سڑک کے کنارے نصب ریمورٹ کنٹرول بم سے اس وقت دھماکہ ہوا جب ایف سی کا ایک قافلہ وہاں سے گذر رہا تھا۔

دھماکے میں ایف سی کے تین اہلکار ہلاک اور دو زخمی ہوئے ہیں۔

کوئٹہ میں ایف سی کے ترجمان نے دھماکے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ ہلاک اور دو زخمی ہو نے والوں کو فوری طور پر تربت ہسپتال منتقل کردیاگیا۔ جہاں سے ہلاک ہونے والوں کی میتیں کوئٹہ لائی جا رہی ہے۔

ترجمان نے بتایا کہ دھماکے سے ایف سی کا ایک ٹرک بھی تباہ ہوا ہے۔

تربت سے مقامی صحافیوں کے مطابق دھماکے کے بعد سیکورٹی فورسز نے علاقے میں سرچ آپریشن شروع کیا ہے لیکن آخری اطلاع تک کوئی گرفتاری عمل میں نہیں آئی تھی۔

دوسری جانب بلوچ لیبریشن فرنٹ کے ترجمان بہرام بلوچ نے ایک نامعلوم مقام سے بی بی سی کو ٹیلی فون کرکے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے اوردعویٰ کیاہے کہ حملے میں ایف سی کے بیس اہلکار ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں