اجمل خٹک کے مزار پر حملے کے خلاف مظاہرے

Image caption اجمل خٹک کے مزار پر حملے کے نتیجے میں مزار کا گنبد مکمل طور پر تباہ ہوگیا تھا

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں حکمران جماعت عوامی نیشنل پارٹی نے مرحوم بزرگ شخصیت، سیاستدان اور ادیب اجمل خٹک کی قبر پر ہونے والے حملے کے خلاف یوم احتجاج منایا۔

اے این پی کے زیراہتمام بدھ کو پشاور پریس کلب کے سامنے ایک احتجاجی مظاہرہ منعقد کیا گیا جس میں پارٹی کے صوبائی رہنماؤں، وزراء اور پختون سٹوڈنٹس فیڈریشن کے کارکنوں نے شرکت کی۔

اس موقع پر مظاہرین نے پلے کارڈز اور بینرز اٹھا رکھے تھے جس پر اے این پی کے سابق صدر مرحوم اجمل خٹک کے مزار پر حملے کے خلاف نعرے درج تھے۔

مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے اے این پی کے رہنما اور صوبائی وزیر میاں افتخار حسین اور دیگر نے کہا کہ اجمل خٹک مرحوم قوم کے ہیرو تھے، ہیرو ہیں اور ہیرو رہیں گے۔

انہوں نے کہا کہ کوئی بھی مذہب مقبروں، مساجد، مزاروں اور دیگر عبادت گاہوں کو نشانہ بنانے کی اجازت نہیں دیتا اور جو افراد ایسے گھناونے جرائم میں ملوث ہیں وہ ملک و قوم اور انسانیت کے دشمن ہیں۔

ادھر ضلع نوشہرہ میں بھی اے این پی کی ضلعی تنظیم کے زیراہتمام احتجاجی مظاہرہ منعقد کیا گیا جس میں اجمل خٹک کے مزار پر حملے کی سخت الفاظ میں مزمت کی گئی۔

دریں اثناء کلچرل جرنلسٹس فورم اور صوبے کے نامور فنکاروں اور کلوگاروں نے بھی دانشور اور ادیب اجمل خٹک کے مزار پر کیے گئے بم دھماکوں کی مذمت کی ہے اور کہا کہ ایسی حرکتیں کرنے والے نہ تو پشتون ہیں اور نہ ہی مسلمان ۔

واضح رہے کہ بدھ کی رات نامعلوم مسلح افراد نے ضلع نوشہرہ کے علاقے اکوڑہ خٹک میں اجمل خٹک کے مزار کو دو بم دھماکوں میں نشانہ بنایا تھا جس سے مزار کا گنبد مکمل طور پر تباہ ہوگیا اور دھماکوں سے پانچ افراد زخمی بھی ہوئے تھے۔

اسی بارے میں