رانا آصف محمود پنجاب کے نئے وزیرِ خزانہ

رانا آصف محمود تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption رانا آصف محمود پنجاب کے دوسرے وزیر خزانہ ہیں جو اقلیتی نشست پر صوبائی اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے

پاکستان کے صوبے پنجاب کے وزیر اعلیْ شہباز شریف نے مسلم لیگ نون کے اقلیتی رکن صوبائی اسمبلی رانا آصف محمود کو پنجاب کا نیا وزیر خزانہ مقرر کر دیا ہے۔

پنجاب کے وزیر خزانہ کا عہدہ دو ماہ سے خالی تھا اور صوبائی بجٹ کے اعلان سے قبل اس پر نئی نامزدگی کی گئی ہے۔

لاہور سے بی بی سی کے نامہ نگار عبادالحق کے مطابق رانا آصف محمود پنجاب کے دوسرے وزیر خزانہ ہیں جو اقلیتی نشست پر صوبائی اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے۔ ان سے پہلے وزارت خزانہ کا قلم دان اقلیتی رکن پنجاب اسمبلی کامران مائیکل کے پاس تھا۔

کامران مائیکل اس سال مارچ میں ہونے والے سینیٹ کے انتخابات میں اقلیتی نشست پر مسلم لیگ نون کی طرف سے سینیٹر بن گئے اور اس وقت سے پنجاب میں صوبائی وزیر خزانہ کا عہدہ خالی تھا۔

نامزد وزیر خزانہ پنجاب رانا آصف محمود کا تعلق پنجاب کے ضلع سیالکوٹ سے ہے اور وہ پہلی بار سنہ دو ہزار آّٹھ میں اقلیتوں کی مخصوص نشست پر حکمران جماعت مسلم لیگ نون کی جانب سے رکن پنجاب اسمبلی منتخب ہوئے۔

نامزد وزیر خزانہ رانا آصف محمود نے بی بی سی کو بتایا کہ وہ بجٹ کی تیاری میں مکمل طور پر شامل رہے ہیں اور اب بھی بجٹ کی تیاری میں مصروف ہیں۔

ان کے بقول وہ اس بجٹ کمیٹی کا بھی حصہ رہے ہیں جس نے سابق وزیر خزانہ سینیٹر اسحاق ڈار کی سربراہی میں تیرہ مارچ سے لے کر تیرہ مئی تک کام کیا اور بجٹ کے لیے شفارشات مرتب کیں۔

انہوں نے مزید بتایا کہ وہ اس بجٹ کمیٹی میں شامل رہے ہیں جس کے سربراہ مسلم لیگ نون کے رکن قومی اسمبلی خرم دستگیر تھے۔ اس لیے یہ تاثر درست نہیں ہوگا کہ وہ بجٹ کی تیاری سے دور رہے ہیں۔

رانا آصف محمود گزشتہ پانچ برس میں پنجاب کے تیسرے وزیر خزانہ ہیں۔ ان سے پہلے پیپلز پارٹی کے رکن پنجاب اسمبلی تنویر اشرف کائرہ نے وزیر خزانہ کی حیثیت سے تین مرتبہ صوبائی بجٹ پیش کیا۔

تاہم پیپلز پارٹی کی پنجاب حکومت سے علیحدگی کے بعد کامران مائیکل کو وزیر خزانہ بنایا گیا۔

پنجاب کے نامزد وزیر خزانہ اپنے عہدے کے حلف کے بارے میں بتایا کہ حکومت پنجاب کی طرف سے سمری گورنر پنجاب سردار لطیف کھوسہ کو بھجوا دی گئی ہے اور ان کے جواب کا انتظار کیا جا رہا ہے۔

رانا آصف محمود نے بتایا کہ جیسے ہی گورنر پنجاب کی طرف سے حلف لینے کی تاریخ کا تعین ہوگا اس دن وہ حلف اٹھالیں گے۔

نامزد وزیر خزانہ کے مطابق امکان ہے کہ آئندہ مالی سال کا صوبائی بجٹ نو جون کو پنجاب میں پیش کیا جائے گا۔

اسی بارے میں