لاہور: عمر عطا بندیال نئے چیف جسٹس مقرر

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

لاہور ہائی کورٹ کے نئے چیف جسٹس جسٹس عمر عطا بندیال نے اپنے عہدے کا حلف اٹھا لیا ہے۔

گورنر پنجاب سردار لطیف کھوسہ نے چیف جسٹس سے حلف لیا۔

لاہور ہائی کورٹ کے سینئیر ترین جج جسٹس عمر عطاء بندیال کا تقرر جسٹس شیخ عظمت سعید کی جگہ کیا گیا جنہیں سپریم کورٹ کا جج مقررکیا گیا ہے۔

بی بی سی کے نامہ نگار عبادالحق کے مطابق لاہور ہائی کورٹ کے نئے چیف جسٹس عمر عطاء بندیال سپریم کورٹ بار کے سابق صدر اور پیپلز پارٹی کے سینیٹر اعتزاز احسن کے معاون وکیل بھی رہ چکے ہیں۔

جسٹس عمر عطا بندیال یکم دسمبر دو ہزار چار کو لاہور ہائی کورٹ کے جج مقرر ہوئے تھے اور وہ سولہ ستمبر دو ہزار بیس کو باسٹھ برس کے ہونے پر لاہور ہائی کورٹ سے ریٹائرڈ ہوجائیں گے۔

لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس عمر عطا بندیال لاہور ہائی کورٹ کے آخری جج ہیں جن کا تقرر سابق فوجی صدر جنرل پرویز مشرف نے کیا تھا۔

وکلاء تحریک کے بعد جسٹس عمر عطا بندیال لاہور ہائی کورٹ کے چوتھے اور مجموعی طور اکتالیسویں چیف جسٹس ہیں۔

جسٹس عمر عطا بندیال نے تین نومبر سنہ دو ہزار سات کو سابق فوجی صدر جنرل پرویز مشرف کی جانب سے لگائی جانے والی ایمرجنسی کے دوران پی سی او کے تحت حلف اُٹھانے سے انکار کر دیا تھا تاہم وہ لاہور ہائی کورٹ کے ان کے چار ججوں میں شامل تھے جنہوں نے وکلا تحریک کے دوران دوبارہ حلف اٹھایا۔

جسٹس عمر عطاء بندیال کے چیف جسٹس بننے کے بعد لاہور ہائی کورٹ میں سینارٹی لسٹس بھی تبدیل ہوگئی ہے اور اب جسٹس صغیر احمد قادری لاہور ہائی کورٹ کے سینئیر ترین جج بن گئے جبکہ لاہور ہائی کورٹ کی سات سینئیر ججوں پر مشتمل انتظامی کمیٹی میں جسٹس سردار طارق مسعود بھی شامل ہوگئے ہیں۔

نئے چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ جسٹس عمر عطاء بندیال اس فل بنچ کے رکن بھی تھے جس نے صدر آصف علی زرداری کے بیک وقت صدر پاکستان اور حکمران جماعت کے سربراہ کے دو عہدے رکھنے کے خلاف فیصلہ دیا تھا۔

لاہور ہائی کورٹ کے فل بنچ نے گزشتہ برس یہ حکم تھا کہ صدرپاکستان آصف علی زرداری اپنی جماعت کے سربراہ کی حیثیت سے سیاسی سرگرمیاں ترک کردیں۔

جسٹس عمر عطا بندیال نے سینئیر ترین جج لاہور ہائی کورٹ کی حیثیت سے وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کے خلاف ایک ہی نوعیت کے مختلف درخواستوں کی سماعت کی اور ان درخواستوں کو اس سفارش کے ساتھ چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ کو بجھوا دیا تھا کہ ان پر کارروائی کے لیے ایک بڑا بنچ تشکیل دیں۔

جسٹس عمرعطاء بندیال اب ان درخواست پر بطور چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ بنچ کی تشکیل کا حکم دیں گے۔