عوام کو بجلی چاہیئے،جمہوریت نہیں، شہباز شریف

آخری وقت اشاعت:  اتوار 3 جون 2012 ,‭ 19:28 GMT 00:28 PST

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے وزیر اعلٰی شہباز شریف نے بجلی کی لوڈشیڈنگ پر وفاقی حکومت کو نکتہ چینی کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ ’لوگوں کو بجلی چاہیئے جمہوریت نہیں چاہیئے۔‘

شہباز شریف نے یہ بات لاہور میں مینار پاکستان پر خیمے میں لگائے گئے دفتر میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہی۔

وزیر اعلٰی پنجاب کے بقول انہیں لوگوں نے یہ کہا کہ شہباز شریف ہمیں بجلی چاہیئے جمہورتی نہیں چاہیئے۔ ان کا کہنا ہے کہ بجلی کی طویل لوڈشیڈنگ نےمہنگائی کے ستائے ہوئے عوام کی مشکلات میں بے پناہ اضافہ کردیا ہے اورعوام بجلی کی قلت بلبلا اٹھی ہے۔

وزیر اعلٰی شہباز شریف نے الزام لگایا کہ پنجاب کے ساتھ لوڈشیڈنگ کے حوالے سے امتیازی سلوک روا رکھا جارہا ہے جسے بقول ان کے برداشت نہیں کیا جائے گا۔

شہباز شریف نے بجلی کی لوڈشیڈنگ کے خلاف ہونے والے احتجاج کا دفاع کیا اور کہ احتجاج عوام کا حق ہے اور وہ عوام کے ساتھ کھڑے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ’اگر دو سو ارب روپے تیل فراہم کرنے اور بجلی پیدا کرنے والی کمپنیوں کو ادا کردیئے جائیں تو آئندہ چوبیس گھنٹوں میں دو ہزار میگا واٹ بجلی نیشنل گرڈ میں آسکتی ہے۔‘

انہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ بجلی کی لوڈشیڈنگ کی وجہ سے عوام کو پانی کی عدم دستیابی کی صورت حال کا بھی سامنا ہے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ ’بجلی کے بحران کی وجہ عوام پریشان ہیں لیکن حکمران عوام کی تکالیف دور کرنے کی بجائے ان میں اضافہ کرہے ہیں۔‘

بی بی سی کے نامہ نگار عبادالحق نے بتایا کہ بجلی کی لوڈشیڈنگ کے خلاف سنیچر کو بھی صوبے کے مختلف شہروں میں احتجاج کا سلسلہ جاری رہا۔

بجلی پیدا کرنے والے ادارے کے مطابق ملک میں بجلی کی کمی چھ ہزار میگا واٹ سے تجاوز کرگئی ہے جس کی وجہ شہروں میں کم از کم دس گھنٹے جبکہ دیہاتی علاقوں سولہ گھنٹوں سے زائد کی لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے۔

وزیر اعلٰی پنجاب شہباز شریف نے بھی ساہیوال میں بجلی کی لوڈشیڈنگ کے خلاف احتجاجی ریلی میں حصہ لیا اور مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بجلی کی بحران کے باعث صرف پنجاب میں معیشت چار سو ارب روپے کا نقصان پہنچا ہے۔

فیصل آباد میں بجلی کی لوڈشیڈنگ کے خلاف احتجاج شہر کی بڑی مارکیٹیں بند رہیں اور کچھ مقام پر احتجاجی مظاہرے بھی کیے گئے۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔