’ بلوچستان میں لاشیں کون پھینک رہا ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Other
Image caption صوبائی حکومت بتائے لاپتہ افراد کی لاشیں کون پھینک رہا ہے: چیف جسٹس افتخار چودھری

سپریم کورٹ نے بلوچستان حکومت کو حکم دیا ہے کہ وہ ایک روز کے اندر بلوچستان سےلاپتہ ہونے والے افراد کی لاشوں کی تفصیلات عدالت میں پیش کرے۔ عدالت نے بلوچستان حکومت کو حکم دیا ہے کہ ڈیرہ بگٹی میں نوگوایریا کو ختم کیا جائے۔

دوسری جانب بلوچستان کی ایک انسداد دہشتگردی کی عدالت نے نواب بگٹی قتل کیس میں سابق صدرجنرل پرویز مشرف کے وارنٹ گرفتاری جاری کردیے ہیں۔

چیف جسسٹس افتخار محمد چودھری کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے کوئٹہ رجسٹری میں بلوچستان میں بدامنی کے مقدمے کی سماعت کے دوران صوبائی سیکرٹری داخلہ نصیب اللہ بازئی سےدریافت کیا کہ صوبے میں لاشیں کون پھینک رہا ہے۔

سپریم کورٹ کا تین رکنی بینچ چیف جسٹس افتخارمحمد چوہدری ،جسٹس عارف خلجی اورجسٹس جواد ایس خواجہ پر مشتمل ہے۔

عدالت نے سیکرٹری داخلہ کو حکم دیا کہ لیویز اور پولیس کے علاقوں سے ملنے والی تمام لاشوں کی تفصیلات کل پیش کیے جائیں۔

سپریم کورٹ نے اٹھارہ فروری دو ہزار گیارہ کو خضدار کے علاقے توتک سے لاپتہ ہونیوالے افراد کو عدالت کے سامنے پیش کرنے کا حکم دیا۔

عدالت نے ایف سی کے وکیل سے کہا کہ اگر ان لوگوں نے کوئی جرم کیا ہے تو ان کے خلاف مقدمہ درج کیا جائے ورنہ انہیں رہا کیا جائے۔

مستونگ سے لاپتہ ہونیوالے نوجوان ظفراللہ کی والدہ نے روتے ہوئے چیف جسٹس سے استدعا کی کہ ان کے بیٹے کو بازیاب کرایا جائے۔ جس پر چیف جسٹس نے پولیس اور ایف سی کو حکم دیا کہ لاپتہ ظفراللہ کو کل تک عدالت کے سامنے پیش کیا جائے۔

بلوچستان کے شورش زدہ علاقے ڈیرہ بگٹی سے لاپتہ افراد کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے چیف سیکرٹری بلوچستان سے استفسار کیا کہ ڈیرہ بگٹی کو کیوں مقامی سمیت دیگر لوگوں کیلئے نوگو ایریا بنا دیا گیا ہے۔

انہوں نے حکم دیا کہ تمام قبائل کو اعتماد میں لے کر عام لوگوں کو ڈیرہ بگٹی میں تحفظ فراہم کیا جائے۔

عدالت نے وزیراعلی بلوچستان نواب اسلم رئیسانی کے بھتیجے میرحقمل رئیسانی کی ہلاکت کے بارے میں تحقیقاتی رپورٹ پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے آئی جی پولیس بلوچستان کوجمعرات کو عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیا۔

ادھر سبی میں انسداد دہشتگردی کی عدالت نے بلوچ قوم پرست رہنماء نواب محمد اکبرخان بگٹی قتل کیس میں سابق فوجی صدر جنرل پرویز مشرف سمیت چھ ملزمان کی ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کردیے۔

باقی ملزمان میں سابق وزیراعظم شوکت عزیز،سابق وفاقی وزیرداخلہ آفتاب احمد خان شیرپاؤ، سابق گورنربلوچستان اویس احمد غنی اور سابق وزیراعلی بلوچستان میرجام یوسف شامل ہیں۔عدالت نے یہ کاروائی ملزمان کی جانب سے پیش نہ ہونے پرکی ہے۔

بعد میں عدالت نے کیس سے سماعت آٹھارہ جولائی تک ملتوی کردی ہے۔