ٹانک میں فائرنگ، اے این پی کے رہنما ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption پولیس نے اس واقعہ کو ٹارگٹ کلنگ قرار دیا ہے

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے جنوبی ضلع ٹانک میں حکام کے مطابق حکمران جماعت عوامی نیشنل پارٹی کے ضلعی صدر خان گل بٹنی ایک قاتلانہ حملے میں ہلاک ہوگئے ہیں۔

پولیس کا کہنا ہے کہ یہ واقعہ منگل کو ٹانک بازار سے چند کلومیٹر دور گرا بڈھا کے علاقے میں پیش آیا۔

پولیس اہلکاروں نے بی بی سی کو بتایا کہ خان گل بٹنی ٹانک شہر سے موٹرسائیکل رکشہ میں سوار اپنے گھر جا رہے تھے کہ ایک مسلح شخص نے ان پر فائرنگ کر دی، جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوئے اور بعد میں ہسپتال میں زخموں کی تاب نہ لا کر دم توڑ گئے۔

انہوں نے کہا کہ رکشہ میں دیگر افراد بھی سوار تھے تاہم انہیں کوئی نقصان نہیں پہنچا ہے۔ پولیس نے اس واقعہ کو ٹارگٹ کلنگ قرار دیا ہے۔

خان گل بٹنی ٹانک میں عوامی نیشنل پارٹی کے ضلعی صدر اور پارٹی کے اہم رہنما تھے۔

خیال رہے کہ خیبر پختونخوا میں پچھلے تین چار سالوں کے دوران حکمران جماعت عوامی نیشنل پارٹی کے متعدد رہنماؤں اور کارکنوں کو ٹارگٹ کلنگ کا نشانہ بنایا گیا ہے۔

اے این پی کے مطابق اب تک اس قسم کے واقعات میں ان کے پانچ سو کے قریب کارکن ہلاک ہو چکے ہیں جن میں اکثریت وادی سوات میں مارے گئے ہیں۔ ان میں صوبائی اسمبلی کے دو ممبران بھی شامل ہیں۔

ادھر دوسری جانب جنوبی ضلع ڈیرہ اسمعیل خان میں ایک پولیس موبائل پر فائرنگ اور دستی بم سے حملہ کیا گیا ہے تاہم حملے میں پولیس اہلکار محفوظ رہے۔

اسی بارے میں