شمالی وزیرستان: ڈرون حملے میں دس ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ usaf

پاکستان کے قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں امریکی ڈرون طیارے کے حملے میں دس شدت پسند ہلاک جبکہ دو زخمی ہو گئے۔

مقامی انتظامیہ کے مطابق یہ حملہ پیر کو میران شاہ سے تقریباً پچاس کلو میٹر دور شوال کے علاقے میں ہوا۔

جاسوس طیارے نے ایک کمپاؤنڈ پر چھ میزائل داغے جس سے کمپاؤنڈ مکمل طور پر تباہ ہوگیا۔

انتظامیہ کے اہلکار کا کہنا ہے کہ نشانہ بننے والا مکان تحریکِ طالبان پاکستان کا مرکز تھا۔

ایک سیکورٹی اہلکار نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ ہلاک ہونے والوں کی لاشیں جل چکی تھیں تاہم یہ واضح نہیں کہ اس حملے میں کسی اہم طالبان رہنما کی ہلاکت ہوئی ہے یا نہیں۔

حکام کا کہنا تھا کہ وہ ہلاک ہونے والوں کی شناخت کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

امریکہ پاکستان کے قبائلی شمالی وزیرستان کے علاقے کو طالبان کا گڑھ سمجھتا ہے اور خیال کیا جاتا ہے کہ القائدہ اور طالبان شدت پسند یہاں سے مغربی ممالک اور افغانستان میں حملوں کی منصوبہ بندی کرتے ہیں۔

اس ماہ کے آغاز میں ایک اور ڈرون حملے میں چھ شدت پسندوں کو ہلاک کیا گیا تھا جبکہ چار جون کو ہونے والے حملے میں القائدہ کے اہم رہنماء ابو یحییٰ البی سمیت پندرہ افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اسی بارے میں