’حکومت، عدلیہ لاپتہ افراد کا معاملہ حل کرے‘

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 20 ستمبر 2012 ,‭ 16:27 GMT 21:27 PST
فائل فوٹو

اس بات کا اعتراف کیا گیا ہے کہ جبری گمشدگیاں ہوئی ہیں اور ابھی بھی ہو رہی ہیں: اولیوئیے دی فرویل

اقوام متحدہ کے جبری گمشدگیوں کے بارے میں جائزہ مشن نے حکومتِ پاکستان اور عدلیہ پر لاپتہ افراد کے معاملے سے نمٹنے پر زور دیا ہے۔

یہ بات اقوام متحدہ کے جبری گمشدگیوں کے بارے میں جائزہ مشن نے جمعرات کو ایک پریس کانفرنس میں کہی۔

جبری گمشدگی کے بارے میں اقوام متحدہ کے اس ورکنگ گروپ کے سربراہ اولیوئیے دی فرویل ہیں جبکہ عثمان الحاجی اس کے رکن ہیں۔

امریکی خبر رساں ایجنسی اے پی کے مطابق ورکنگ گروپ کے سربراہ اولیوئیے دی فرویل نے کہا کہ ان کو حکومتِ پاکستان نے آنے کی دعوت دی تھی۔

اس مشن نے پاکستان میں دس روز گزارے اور سندھ اور بلوچستان کا دورہ کیا۔

پاکستان کی سرکاری خبر رساں ایجنسی اے پی پی کے بقول مشن نے حکومتِ پاکستان کی لاپتہ افراد کے مسئلے کو حل کرنے کی کوششوں کی تعریف کی لیکن مزید کہا کہ حکومت کو ابھی بھی سنگین چیلنجز کا سامنا ہے۔

ورکنگ گروپ کے سربراہ اولیوئیے دی فرویل نے کہا ہے کہ اس بات کا اعتراف کیا گیا ہے کہ جبری گمشدگیاں ہوئی ہیں اور ابھی بھی ہو رہی ہیں۔

’ہم نے نوٹ کیا ہے کہ جبری گمشدگیوں کے کیسز ابھی بھی حکام کو پہنچائی جاتی ہیں لیکن ان گمشدگیوں کی تعداد کے حوالے سے متنازعہ ہے۔‘

ورکنگ گروپ کے سربراہ نے مزید کہا کہ جبری گمشدگیوں کی انکوائری کمیشن کے سامنے پڑے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ حکومتِ پاکستان کو قانون نافذ کرنے والے اداروں اور انٹیلیجنس ایجنسیوں کے احتساب کو بھی یقینی بنانے کی ضرورت ہے۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے اس مشن سے ملنے سے انکار کردیا تھا۔ اس کے علاوہ پارلیمنٹ کے ممبران نے بھی اس مشن کی پاکستان آمد پر تنقید کی تھی۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔