مستونگ میں سینیئر ڈاکٹر کو قتل کر دیا گیا

آخری وقت اشاعت:  اتوار 7 اکتوبر 2012 ,‭ 19:48 GMT 00:48 PST
ڈاکٹر کا قتل: فائل فوٹو

بلوچستان میں ڈاکٹروں پر حملے بڑھ رہے ہیں

بلوچستان کے شہر مستونگ میں نامعلوم مسلح افراد کی فائرنگ سے ایک سینیئر ڈاکٹر ہلا ک ہوگئے ہیں۔
ہفتے اور اتوار کی درمیانی شب ضلعی ہیڈ کوارٹر ہسپتال کے چیف میڈیکل آفیسر عبدالحمید بنگلزئی کو اس وقت قتل کردیا گیا جب وہ اپنی گاڑی میں پرائیویٹ کلینک سے گھر جارہے تھے۔
پولیس کے مطابق ڈاکٹر عبدالحمید بنگلزئی کی گاڑی کو مستونگ کے علاقے لا کھا میں دو نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے نشانہ بنایا۔ اس حملے میں ڈاکٹر بنگلزئی اور گاڑی میں سوار ایک اور شخص شدید زخمی ہوگئے جنہیں فوراً ہسپتال لایا گیا لیکن وہاں ڈاکٹر عبدالحمید بنگلزئی زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے ہلاک ہوگئے۔ جبکہ ان کے زخمی ساتھی ابھی بھی ہسپتال میں زیر علاج ہیں۔
پولیس کے مطابق حملہ آور فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔
فوری طور پر چیف میڈیکل آفیسر پر حملے کی وجہ معلوم نہیں ہوسکی۔
بلوچستان میں سنہ دو ہزار چھ کے بعد سے ڈاکٹر شدید عدم تحفظ کا شکار ہوگئے ہیں انہیں نہ صرف ٹارگٹ کلنگ کا نشانہ بنایا جا رہا ہے بلکہ ان کو تاوان کے لیے بھی اغوا بھی کیا جا رہا ہے۔ صوبائی دارالحکومت کوئٹہ میں پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن (پی ایم اے ) بلوچستان چیپٹر کے سابق صدر اور سینیئر ڈاکٹر مزار خان بلوچ کو بھی قتل کر دیا گیا تھا۔
پی ایم اے بلوچستان کے صدر ڈاکٹر سلطان ترین نے ڈاکٹر عبد الحمید بنگلزئی کے قتل کی مذمت کرتے ہوئے ان کے قاتلوں کی فوری گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ پیر کو پی ایم اے کا اجلاس طلب کر کے اس واقعہ کے خلاف احتجاج کے سلسلے میں آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کیا جائے گا۔
بلوچ ڈاکٹرز فورم نے بھی ڈاکٹر بنگلزئی کے قتل کی مذمت کی ہے۔
2006کے بعد سے اب تک بلوچستان کے5سے زائد ڈاکٹر فائرنگ کے واقعات میں ہلاک ہوئے ہیں جبکہ اس سال کے دوران کم از کم تین ڈاکٹروں کو اغوا بھی کیا گیا۔

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔