بلوچستان، پولیو کے ایک اور کیس کی تصدیق

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 19 اکتوبر 2012 ,‭ 05:31 GMT 10:31 PST

سیکرٹری صحت عصمت اللہ کاکڑ نے بتایا کہ فتویٰ دینے والے پیش امام کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے گی

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے علاقے شیرانی میں حکام نے پولیو کے ایک اور کیس کی تصدیق کی ہے۔

پولیو کے اس نئے کیس کی تصدیق کوئٹہ سے اندازاً ساڑھے چار سو کلو میٹر دور شمال مشرق میں ضلع شیرانی کے علاقے دھانہ سر میں ساڑھے تین سالہ نجیب اللہ نامی بچے میں ہوئی ہے۔

بلوچستان کے سیکرٹری صحت عصمت اللہ کاکڑ نے پولیو کے اس نئے کیس کی تصدیق کرتے ہوئے بی بی سی کو بتایا کہ اس علاقے کے پیش امام کی جانب سے فتویٰ دینے کے باعث اس بچے کے والدین نے پولیو کے قطرے پلانے سے انکار کیا تھا۔

سیکرٹری صحت عصمت اللہ کاکڑ نے بتایا کہ فتویٰ دینے والے پیش امام کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے گی۔

محکمہ صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ نئے کیس کے بعد بلوچستان میں رواں سال اب تک پولیو کے کل چار کیسز سامنے آئے ہیں۔

2010ء اور2011ء میں پولیو کے بہت زیادہ کیسز سامنے آنے کے بعد پولیوکو مانیٹر کرنے والے بین الاقوامی اداروں نے بلوچستان کو ریڈ زون قرار دیا تھا۔ ان اداروں خبردار کیا تھا کہ اگر بلوچستان میں پولیو کے تدارک کے لیے موثر اقدامات نہیں کیے گئے تو بلوچستان سے تعلق رکھنے والے شہریوں کے بیرون ملک سفر پر پابندی عائد کی جائے گی۔

"بلوچستان میں پولیو کے کیسز میں اضافے کی ایک بڑی وجہ افغانستان سے بڑے پیمانے پر لوگوں کی آمدورفت ہے اور اس کے علاوہ بعض علاقوں میں شورش بھی ایک وجہ ہے۔"

محکمہ صحت

پولیو کے بہت زیادہ کیسز سامنے آنے کے بعد گزشتہ سال بلوچستان کے تین اضلاع کوئٹہ، پشین اور قلعہ عبداللہ کو ہائی رسک اضلاع قرار دیا گیا تھا۔

محکمہ صحت کے حکام بلوچستان میں پولیو کے کیسز میں اضافے کی ایک بڑی وجہ افغانستان سے بڑے پیمانے پر لوگوں کی آمدورفت کو قرار دیتے ہیں اس کے علاوہ بعض علاقوں میں شورش کو بھی ایک وجہ قرار دیا جارہا ہے۔

حکام کا دعویٰٖ ہے کہ پولیو وائرس کے خاتمے کے لیے حکومت کی جانب سے موثر اقدامات کے بعد کیسز میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔ حکام کے مطابق گزشتہ سال بلوچستان میں 54کیسز رپورٹ ہوئے تھے جبکہ رواں سال اب تک صرف چار کیسز سامنے آئے ہیں ۔

یاد رہے کہ پندرہ اکتوبر کو تین روزہ پولیو مہم کے پہلے روز کوئٹہ میں پولیو ٹیم کے ایک رکن کو قتل کردیا گیا تھا۔ اس واقعے کے بعد پیرا میڈیکل سٹاف ایسوسی ایشن بلوچستان نے پولیو کی آئندہ مہم کے بائیکاٹ کا اعلان کیا ہے ۔

پیرا میڈیکل سٹاف ایسوسی ایشن بلوچستان کے صدر عبد الصمد رئیسانی نے بی بی سی کو بتا یا کہ مناسب سکیورٹی نہ ہونے کی وجہ سے پولیو ٹیم کے رکن کو کوئٹہ میں قتل کیا گیا جس کے باعث پیرا میڈکس نے بائیکاٹ کا فیصلہ کیا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔