بلوچستان میں سات افراد اغوا

آخری وقت اشاعت:  منگل 23 اکتوبر 2012 ,‭ 10:53 GMT 15:53 PST

بلوچستان میں غائب ہونے والے افراد کی بازیابی کے لیے مظاہرہ۔

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے علاقے ڈھاڈر سے منگل کو سات افراد کو اغوا کر لیا گیا۔

مغویوں کو کوئٹہ سے سبی جانے والی ایک مسافر ویگن سے اتارا گیا۔ ان میں مسافر ویگن کے ڈرائیور اور کلینر کے علاوہ پانچ مسافر شامل ہیں۔

ضلعی پولیس آفیسر بولان غلام دستگیر ترین نے اس واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ ’ان افراد کو گزشتہ شب کوئٹہ سے سبی جاتے ہوئے ڈھاڈر کے قریب سے اغوا کیا گیا۔‘

مغویوں کو ویگن سے اتارنے کے بعد مسلح افراد نامعلوم مقام کی جانب لے گئے۔

اغوا ہونے والے پانچ مسافروں کا تعلق سبی سے بتایا جاتا ہے جواپنے ایک زخمی رشتہ دار کے علاج معالجے کے بعد مذکورہ ویگن میں واپس جارہے تھے۔ زخمی شخص اس ماہ کے اوائل میں سبی کے نشتر روڈ پر ہونے والے بم دھماکے میں زخمی ہوا تھا۔

پولیس نے ابتدائی تفتیش کے حوالے سے بتایا کہ مذکورہ افراد کو تاوان کے لیے اغوا کیا گیا ہے۔دو ہزار نو کے بعد سے بلوچستان میں اغوا برائے تاوان کے واقعات میں بہت زیادہ اضافہ ہوا ہے۔

سپریم کورٹ نے اپنے حالیہ عبوری حکم میں بلوچستان حکومت کی لوگوں کی جان ومال کے تحفظ میں ناکامی کی جو وجوہات گنوائی تھیں ان میں اغوا برائے تاوان کے واقعات میں خطرناک حد تک اضافہ بھی شامل ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔