عافیہ صدیقی کی اپیل مسترد، سزا برقرار

آخری وقت اشاعت:  منگل 6 نومبر 2012 ,‭ 01:04 GMT 06:04 PST

ڈاکٹر عافیہ کو جولائی دو ہزار آٹھ میں افغان پولیس نے کیمیائی اجزاء رکھنے پر گرفتار کیا تھا

امریکہ کی ریاست نیو یارک کی عدالت نے پاکستانی سائنسدان عافیہ صدیقی کی اپیل کو مسترد کرتے ہوئے ان کی سزا کو برقرار رکھا ہے۔

امریکی عدالت نے عافیہ صدیقی کی اپیل کی مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ماتحت عدالت کے جج نے عافیہ صدیقی کو اپنے دفاع میں بیان دینے کی اجازت دے کر غلطی نہیں کی ہے۔

یاد رہے کہ عافیہ صدیقی کو ستمبر 2010 میں امریکی ڈسٹرکٹ کورٹ کے جج رچرڈ برمن نے 86 سال کی سزا سنائی تھی۔

عافیہ صدیقی کو وفاقی عدالت کی جیوری نے افغانستان میں امریکی فوج اور حکومت کے اہلکاروں پر مبینہ طور قاتلانہ حملے اور قتل کی کوشش کرنے کے سات الزامات میں مجرم قرار دیا تھا۔

ڈاکٹر عافیہ کو جولائی دو ہزار آٹھ میں افغان پولیس نے کیمیائی اجزاء رکھنے اور ایسی تحریریں رکھنے پر گرفتار کیا تھا جن میں نیویارک پر حملے کا ذکر تھا جس میں بھاری جانی نقصان ہونا تھا۔

استغاثہ کے مطابق ڈاکٹر عافیہ نے کیمیائی اجزاء اور نیویارک میں حملے کے بارے میں تحریروں کی برآمدگی کے بارے میں سوال پوچھے جانے پر رائفل اٹھا کر فوجیوں پر گولیاں چلائیں۔ اس حملے میں کوئی امریکی زخمی نہیں ہوا تھا۔

برطانوی خبر رساں ایجنسی رائٹرز کے مطابق اپیل کورٹ میں جیوری کو بتایا گیا کہ گرفتاری کے ایک روز بعد ڈاکٹر عافیہ نے تفتیشی کمرے میں ایم فور رائفل چھین کر فائرنگ شروع کردی۔

ڈاکٹر عافیہ کے وکلاء نے موقف اختیار کیا کہ عافیہ نے بدحواسی کی کیفیت میں رائفل چھینی اور فائرنگ کی۔ ان کا موقف تھا کہ عافیہ کے اس عمل کا دہشت گردی کے ساتھ کوئی تعلق نہیں بنتا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔