پشاور:خودکش حملے ایس پی سمیت چھ ہلاک

آخری وقت اشاعت:  بدھ 7 نومبر 2012 ,‭ 08:53 GMT 13:53 PST
ہلال حیدر

پشاور میں پولیس افسران کو نشانہ بنانے کا سلسلہ کافی عرصے سے جاری ہے

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں بدھ کی صبح ایک خودکش حملے میں پولیس افسر سمیت اہلکاروں سمیت چھ افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ حملہ بدھ کو قصہ خوانی بازار کے خان رازق تھانے کے سامنے ہوا۔

حملے کے وقت ایس پی تفتیش ہلال حیدر خان اپنی گاڑی پر دفتر جا رہے تھے کہ پیدل خوکش حملہ آور نے انہیں نشانہ بنایا۔

آئی جی پولیس خیبر پختونخوا کے دفتر سے پولیس اہلکار محمد سلمان نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ اس حملے میں ایس پی کے ڈرائیور الیاس اور ایک محافظ مراد سمیت دو راہ گیر بھی موقع پر ہلاک ہو گئے جبکہ ایک راہ گیر ہسپتال میں دم توڑ گیا۔

اس حملے میں تئیس افراد زخمی بھی ہوئے ہیں جن میں سے چند کی حالت نازک بتائی جاتی ہے۔ زخمی ہونے والوں میں عام شہری اور پولیس اہلکار شامل ہیں۔

پولیس اہلکار کے مطابق ایس پی ہلال حیدر خان کی رہائش گاہ تھانے کے قریب ہی تھی۔

محمد سلمان نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ خود کش حملہ آور کا سر مل گیا ہے اور اس کی شناخت کی جا رہی ہے۔

کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے مرکزی ترجمان احسان اللہ احسان نے ایک نامعلوم مقام سے فون کر کے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

گذشتہ کچھ دنوں میں پشاور میں ہونے والا یہ تیسرا بڑا حملہ ہے جس میں اعلیٰ پولیس حکام کو نشانہ بنایا گیا ہے۔

چند روز قبل پشاور کے قریب متنی کے علاقے میں ایک چوکی پر حملے میں کے بعد حملہ آور پولیس ایس پی خورشید خان کا سر کاٹ کر ساتھ لے گئے تھے۔

ایس پی خو رشید خان پر حملے سے قبل ان کے پیش رو ایس پی عبدالکلام بھی شدت پسندوں کے اسی نوعیت کے حملے میں ہلاک ہوئے تھے۔

اس سے پہلے اسی علاقے کے ڈپٹی سپرنڈنٹ رشید خان بھی گاڑی پر بم حملے میں ہلاک ہوئے تھے۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔