کراچی،کوئٹہ میں موٹرسائیکل چلانے پر پابندی

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 15 نومبر 2012 ,‭ 16:31 GMT 21:31 PST

ایف سی کی تمام پلاٹونوں کو ڈیوٹی پر بلا لیا گیا ہے

محرم الحرام کے آغاز پر دہشتگردی کی کارروائیوں کے خطرے کے پیشِ نظر کراچی اور کوئٹہ میں ایک دن کے لیے موٹرسائیکل چلانے پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔

جمعرات کو اسلام آباد میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے پاکستان کے وزیرِ داخلہ رحمان ملک نے بتایا کہ پابندی کا فیصلہ دونوں شہروں میں جمعہ کو موٹر سائیکل کے ذریعے دہشت گردی کی ممکنہ کارروائیوں کی اطلاعات کے بعد کیا گیا ہے۔

انھوں نے کہا کہ یہ پابندی صرف ایک دن کے لیے ہوگی اور اس سے کوئی بھی مسثتنیٰ نہیں ہوگا۔

رحمان ملک نے کہا کہ کراچی میں ایف سی کی تمام پلاٹونوں کو ڈیوٹی پر بلا لیا گیا ہے اور عوام کی حفاظت میں کسی قسم کی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی۔

انھوں نے کہا کہ ان دونوں شہروں میں موبائل سروس معطل کرنے کے بارے میں فیصلہ جمعہ کو ہی کیا جائے گا۔

ادھر کراچی میں جمعرات کو دو پولیس اہلکاروں سمیت مزید چھ افراد کو ہلاک کر دیا گیا ہے۔

ہمارے نامہ نگار کے مطابق جمعرات کو سپر ہائی وے پر جھاڑیوں میں موجود ایک کار سے دو لاشیں برآمد ہوئی ہیں، جن کی شناخت سپاہی کامران اور اصغر کے نام سے کی گئی ہے۔

اس کے علاوہ منگھو پیر کے علاقے میں ایک شخص کو موٹر سائیکل سواروں نے گولی مار کر ہلاک کیا ہے۔ عینی شاہدین نے پولیس کو بتایا کہ موٹر سائیکل سوار مقتول کو اپنے ساتھ لائے تھے اور اسے اتار کرگولیاں ماری گئیں۔

اس سے پہلے بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب دو بجے پیر الٰہی بخش کالونی میں فائرنگ سے تین افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

پولیس نے مقتولین کی شناخت اشفاق احمد، جاوید اور ضیاالدین کے نام سے کی ہے جو شہر کے مختلف علاقوں کے رہائشی تھے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔