صدر زرداری کا کے پی کےاسمبلی سے تاریخی خطاب

آخری وقت اشاعت:  پير 19 نومبر 2012 ,‭ 13:03 GMT 18:03 PST
آصف علی زرداری

زرداری صوبائي اسمبلی سے خطاب کرنے والے پہلے منتخب صدر ہوں گے

صدر آصف علی زرداری کا کہنا ہے کہ ایک ’بارڈر لائن‘ ریاست ہونے کی وجہ سے پوری دنیا کو پاکستان کی افادیت کا احساس ہے۔

یہ بات انہوں نے آج پشاور میں خیبر پختونخوا اسمبلی کے خصوصی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

آصف علی زرداری پہلے منتخب صدر ہیں جنہوں نے کسی صوبائی اسمبلی سے خطاب کیا ہے۔ اس سے پہلے جنرل ضیاء الحق نے پنجاب اسمبلی کے یوم تاسیس کے موقع پر خطاب کیا تھا۔

صدر نے بین الاقوامی حالات پر بات کرتے ہوئے پاکستان کی اہمیت پر زور دیا۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کا جغرافیائی مقام اور آئندہ تجارت کے پیشِ نظر پوری دنیا اس کی افادیت سے واقف ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس اسمبلی کا پانچ سال پورے کرنا ہماری اور اس اسمبلی کی دانش اور صبر کی ایک بہت بڑی مثال ہے۔

صدر زرداری نے کہا کہ خطرات کے باوجود وہ اپنے اکلوتے بیٹے کو سیاست میں لے کر آئے ہیں۔ صدر نے کہا کہ اصل انقلاب جمہوریت سے آنا ہے۔

صوبے کے مستقبل کے بارے میں صدر نے کہا کہ خبیر پختونخوا میں تمام وسائل ہیں تاہم امن و امان کی صورتحال ٹھیک نہیں ہے۔

صدر نے کہا کہ ان کی حکومت نے صوبوں کو این ایف سی ایوارڈ دیا اور اب تمام صوبےسمجھتے ہیں کہ ان کا اسلام آباد میں حصہ ہے۔ صدر نے بتایا کہ انہوں نے جیل میں ہوتے ہوئے میاں نواز شریف اور دیگر سیاسی قوتوں سے مفاہمت کی کوششیں کیں اور جنرل مشرف کو مضبوط نہیں ہونے دیا۔

جماعتِ اسلامی کے سیاسی رہنماء قاضی حسین احمد پر ہونے والے حملے کا ذکر کرتے ہوئے صدر نے کہا کہ یہ ایک سوچ کا نتیجہ ہے جو باہر سے آئی ہے۔

"ہم نے جیل میں بیٹھے ہوئے میاں نواز شریف اور دیگر سیاسی قوتوں سے مفاہمت کی کوششیں کیں اور جنرل مشرف کو مضبوط نہیں ہونے دیا"

صدر زرداری

صدر نے کہا کہ ’میں سیاست میں تب آیا جب ایک سوچ نے محترمہ بے نظیر بھٹو کو ہم سے جدا کر دیا۔‘ صدر نے اپنے خطاب کے آغاز میں کہا کہ انہیں خوشی ہے کہ وہ پختونوں کے خیبر پختونخوا میں آئے ہیں۔

خیبر پختونخوا اسمبلی کے حکام نے بتایا ہے کہ صدر آصف علی زرداری کو خطاب کی دعوت وزیر اعلیٰ امیر حیدر خان ہوتی اور سپیکر کرامت اللہ چغرمٹی نے دی تھی۔

اجلاس صدر کے خطاب کے بعد متلوی کر دیاگیا۔

اجلاس سے پہلے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے سپیکر کرامت اللہ چغرمٹی نے کہا کہ آصف علی زرداری پورے ملک کے صدر ہیں اور اسمبلی میں آمد پر ان کا پر تپاک خیر مقدم کیا جائےگا۔

ان کا کہنا تھا کہ صوبے کی اپنی روایات ہیں جس کے مطابق صدر کو خوش آمدید کہا جائے گا۔

"میری دعا ہے کہ آئندہ نسلیں بھی اسی راہ پر چلتی رہیں گی اور میں اپنے اکلوتے بیٹے کو خطرات کے باوجود سیاست میں لایا ہوں"

صدر زرداری

انہوں نے بتایا کہ کبھی کوئی گورنر اسمبلی میں نہیں آئے اور صدر کی اسبملی میں آمد خیبر پختونخوا کے لیے فخر کی بات ہے۔

خیبر پختونخوا اسمبلی میں حزب اختلاف کے اراکین نے اپنے تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس اجلاس کے لیے انہیں اعتماد میں نہیں لیاگیا تاہم اجلاس میں حزب اختلاف کے اراکین موجود رہیں گے۔

ہمارے نامہ نگار عزیز اللہ خان نے بتایا کہ پشاور میں صدر کی آمد کے موقع پر سخت حفاظتی انتظامات کیےگئے ہیں۔ اسمبلی کی طرف جانے والے خیبر روڈ اور جیل روڈ مکمل طور پر سیل کر دیےگئے ہیں۔ شہر میں مختلف مقامات پر ٹریفک جام ہے اور لوگوں کو منزل پر پہنچنے میں سخت مشکلات کا سامنا ہے۔

جی ٹی روڈ پر گلبہار سےلے کر یونیورسٹی روڈ گورا قبرستان تک بڑی تعداد میں گاڑیاں مختلف مقامات پر بڑی تعداد میں گاڑیاں کھڑی ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔