معمر شہریوں کے لیے شیلٹر ہاؤس کی قرارداد

آخری وقت اشاعت:  منگل 18 دسمبر 2012 ,‭ 21:51 GMT 02:51 PST

سینیٹر فرحت اللہ بابر نے کہا کہ بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کے تحت شیلٹر ہاؤسز کو قائم کیا جانا چاہیے

پاکستان کی سینٹ نے قرارداد اتفاق رائے سے منظور کرتے ہوئے حکومت سے سفارش کی ہے کہ معمر شہریوں کے لیے شیلٹر ہاؤسز تعمیر کیے جائیں۔

یہ قرارداد سینیٹ میں پیر کے روز متفقہ طور پر منظور کی گئی۔ قرارداد پیش کرتے ہوئے ڈاکٹر کریم احمد خواجہ نے کہا کہ کئی معمر شہری بغیر پناہ اور خاندانوں سے الگ رہ رہے ہیں۔

قرارداد پر اظہار خیال کرتے ہوئے سینیٹر سعید غنی نے کہا کہ پہلے یہ پروگرام بڑے شہروں میں شروع کیا جانا چاہیے اور بعد میں اسے اضلاع تک بڑھا دیا جائے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ معمر شہری بے گھر ہیں اور سڑکوں پر رہ رہے ہیں۔

سینیٹر فرحت اللہ بابر نے کہا کہ بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کے تحت شیلٹر ہاؤسز کو قائم کیا جانا چاہیے تاکہ معمر شہریوں کی رہائش کامسئلہ حل ہو۔

کامل علی آغا نے بحث میں حصہ لیتے ہوئے کہا کہ معمر شہریوں کے لیے شیلٹر ہاؤسز کا قیام باقاعدہ قانون سازی کے ذریعے ہونا چاہیے اور حکومت کو اس سلسلے میں رقم مختص کرنی چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ کراچی، لاہور اور راولپنڈی میں ایسے شیلٹر ہاؤس نجی طور پر قائم ہیں لیکن حکومت کو ان کی مدد کرنی چاہیے۔

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔