سپریم کورٹ بار نے کل جماعتی کانفرنس بلا لی

آخری وقت اشاعت:  منگل 8 جنوری 2013 ,‭ 16:28 GMT 21:28 PST

سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کی جانب سے بلائی گئی اس کانفرنس میں شرکت کے لیے حزبِ اقتدار اور حزبِ مخالف کی جماعتوں کو دعوت نامے بھجوا دیےگئے ہیں

پاکستان میں وکلاء کی تنظیم سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن نے ملک کی موجودہ سیاسی صورت حال پر کل جماعتی کانفرنس طلب کرلی ہے جو دس جنوری کو لاہور میں ہوگی۔

کل جماعتی کانفرنس میں شرکت کے لیے حزبِ اقتدار اور حزبِ مخالف کی جماعتوں کو دعوت نامے بھجوا دیئے گئے ہیں۔

سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کے سیکرٹری راجہ جاوید اقبال کا کہنا ہے کہ وکلاء نے ملک میں جمہوریت کی بحالی کے لیے بہت جدوجہد کی ہے اور ملک چلانے کے لیے جمہوریت ہی بہترین نظام ہے ۔

انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر طاہر القادری جو باتیں کررہے ہیں وہ درست ہوسکتیں ہیں، لیکن یہ وقت ایسی باتوں کا نہیں ہے۔

سپریم کورٹ بار کے سیکرٹری نے کہا کہ وکلاء برادری اور سیاسی جماعتیں یہ چاہتی ہیں کہ ملک میں بروقت انتخابات ہوں اور جمہوری عمل چلتا رہے۔

راجہ جاوید اقبال نے کہا کہ اس وقت جمہوریت کے حوالے سے ابہام پیدا کیا جارہا ہے اس لیے تمام جمہوری قوتوں کو ایک ایجنڈے پر لانا چاہتے ہیں تاکہ جمہوریت کے بارے میں کوئی مشترکہ حکمت عملی اپنائی جاسکے۔

" مہناج القرآن کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری کو اس کانفرنس میں شرکت کے لیے دعوت دینا چاہتے تھے لیکن ان کا ادارہ منہاج القرآن ایک سیاسی جماعت کی حیثیت سے رجسٹرڈ نہیں ہے اس لیے انہیں کانفرنس میں مدعو نہیں کیا گیا۔"

سپریم کورٹ بار کے سیکرٹری کے مطابق کُل جماعتی کانفرنس کے دو اجلاس ہوں گے۔ پہلے اجلاس میں حزبِ اختلاف کی جماعتیں اور وکلاء رہنما جبکہ دوسرے اجلاس میں حکومت اور اس کی اتحادی جماعتوں کے رہنما خطاب کریں گے۔

راجہ جاوید اقبال نے بتایا کہ وہ مہناج القرآن کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری کو اس کانفرنس میں شرکت کے لیے دعوت دینا چاہتے تھے لیکن ان کا ادارہ منہاج القرآن ایک سیاسی جماعت کی حیثیت سے رجسٹرڈ نہیں ہے اس لیے انہیں کانفرنس میں مدعو نہیں کیا گیا۔

وکلاء تنظیم کی آل پارٹیز کانفرنس میں سپریم کورٹ بار کے سابق صدور، پاکستان بارکونسل، صوبائی بار کونسلز اور صوبائی ہائی کورٹ کے عہدیدار بھی شرکت کریں گے۔ کانفرنس کے اختتام پر ایک اعلامیہ جاری کیا جائے گا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔