خیبر ایجنسی میں چار سکیورٹی اہلکار ہلاک

آخری وقت اشاعت:  منگل 15 جنوری 2013 ,‭ 13:18 GMT 18:18 PST

خیبر ایجنسی میں اس سے پہلے بھی شدت پسندی نے متعدد بار سکیورٹی اہلکاروں پر حملے کیے ہیں

پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر ایجنسی کے علاقے باڑہ میں حکام کے مطابق شدت پسندوں نے ایک چوکی پرحملہ کر کے چار سکیورٹی اہلکاروں کو ہلاک کر دیا۔

مقامی اہلکاروں نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ واقعہ تحصیل باڑہ کے علاقے شلوبر میں اس وقت پیش آیا جب چوکی میں ایک درجن سے زیادہ اہلکار موجود تھے۔

انہوں نے کہا کہ شدت پسندوں کے حملہ میں چار سکیورٹی اہلکار ہلاک جبکہ دو زخمی ہو گئے اور سکیورٹی اہلکاروں کی جوابی کارروائی سے چار شدت پسند بھی ہلاک ہوئے۔

اہلکاروں کے مطابق نامعلوم شدت پسندوں اور سکیورٹی فورسز کے درمیان کئی گھنٹوں تک فائرنگ کا سلسلہ جاری تھا۔جس میں چوکی کو کافی نقصان پہنچا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ جھڑپ میں دونوں جانب سے بھاری اسلحے کا استعمال کیاگیا ہے۔

یاد رہے تحصیل باڑہ کے قریب شلوبر کے علاقے میں اس واقعہ سے چند ہفتے پہلے ایک فوجی آپریشن ہوا تھا جس کے بعد سے بڑی تعداد میں لوگوں نے علاقے سے نقل مکانی بھی کی تھی۔

پاکستان کے قبائلی علاقے تحصیل باڑہ میں گزشتہ چار سالوں شدت پسندوں کے خلاف غیر اعلانیہ کارروائیاں ہو رہی ہیں اور سکیورٹی فورسز نے متعدد بار یہ دعویٰ کیا ہے کہ باڑہ کے اکثر علاقوں کو شدت پسندوں سے صاف کر لیا ہے۔

یاد رہے کہ باڑہ میں گزشتہ دو تین سالوں کے دوران ایک بڑی تعداد میں ایسے لاشیں ملی ہیں جو مقامی لوگوں کے مطابق فوجی کارروائیوں کے دوران لاپتہ ہو جاتے ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔