بجلی کا بریک ڈاؤن، تحقیقات کا آغاز

آخری وقت اشاعت:  پير 25 فروری 2013 ,‭ 08:12 GMT 13:12 PST

پاکستان میں بجلی کے نظام میں ایک جگہ خرابی سے پورا نظام متاثر ہوتا ہے

پاکستان میں بجلی کے نظام میں خرابی کی وجہ سے دارالحکومت اسلام آباد سمیت ملک کے بیشتر علاقوں کو بجلی کے تعطل کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

تاہم سرکاری ٹیلی ویژن کے مطابق اب ملک کے بیشتر حصوں میں بجلی بحال کی جا چکی ہے۔ سیکریٹری بجلی و پانی رائے سکندر نے کہا ہے کہ سسٹم میں5000 میگاواٹ سے زیادہ بجلی واپس بحال کی جا چکی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ جامشورو گرڈ سے کراچی کو 100 میگاواٹ بجلی فراہم کی گئی ہے، جب کہ اسلام آباد اور خیبر پختون خوا میں بھی بجلی بحال کی جا چکی ہے۔

انھوں نے کہا کہ اس بریک ڈاؤن کی تحقیقات شروع کر دی گئی ہیں جس کے لیے ایک چار رکنی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جو سات دن کے اندر اندر اس کی رپورٹ پیش کرے گی۔

پاکستان کے بعض شہروں سے اطلاعات کے مطابق بجلی جزوی طور پر بحال ہوئی ہے اور اب بھی چند گھنٹے بجلی آنے کے بعد کئی گھنٹوں تک بند رہتی ہے۔

وزارتِ پانی و بجلی کے حکام کے مطابق بجلی کا یہ تعطل 1200 میگا واٹ بجلی پیدا کرنے والے حبکو پاور پلانٹ میں فنی خرابی کی وجہ سے اتوار اور پیر کی درمیانی رات پونے بارہ بجے شروع ہوا جس نے پورے ملک کو لپیٹ میں لے لیا۔

حبکو پاور کمپنی کے دفتر متعدد بار رابطہ کرنے کے باوجود بریک ڈاؤن کی نوعیت کی تفصیل معلوم نہ ہو سکی۔ کمپنی کے اہلکاروں کا کہنا ہے کہ اس سلسلے میں ایک اجلاس صبح نو بجے سے قبل سے جاری ہے جو ایک بجے تک ختم نہیں ہوا تھا۔

رات حبکو پلانٹ میں خرابی کی وجہ سے کراچی میں بجلی فراہم کرنے والے ادارے کے ای ایس سی کو بجلی کی فراہمی بھی معطل ہوگئی اور بیشتر شہر تاریکی میں ڈوب گیا۔ کراچی کے علاوہ سندھ کے دیگر علاقوں سے بھی بجلی کے تعطل کی اطلاعات ملی ہیں۔

بلوچستان میں دارالحکومت کوئٹہ سمیت بیشتر صوبے میں بجلی کی فراہمی معطل ہو گئی جبکہ پنجاب میں صوبائی دارالحکومت لاہور اور فیصل آباد سمیت متعدد بڑے شہروں سے بجلی بند ہونے کی اطلاعات ملی ہیں۔

اتوار کو رات گئے اسلام آباد میں ایک ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے امور پانی و بجلی کے وفاقی سیکرٹری رائے سکندر نے بتایا کہ یہ فنی خرابی نیشنل پاور کنٹرول سنٹر کے نظام میں نہیں تھی بلکہ حبکو بجلی گھر کی اچانک بندش سے ملک میں بجلی کے نظام سے بارہ سو میگا واٹ بجلی کی اچانک کمی اس بریک ڈاؤن کی وجہ بنی۔

" یہ فنی خرابی نیشنل پاور کنٹرول سنٹر کے نظام میں نہیں تھی بلکہ حبکو بجلی گھر کی اچانک بندش سے ملک میں بجلی کے نظام سے بارہ سو میگا واٹ بجلی کی اچانک کمی اس بریک ڈاؤن کی وجہ بنی۔حبکو پلانٹ کے ’ٹرپ‘ کر جانے کی وجہ سے منگلا اور تربیلا سمیت باقی گرڈ سسٹم بھی اوور لوڈ کی وجہ سے بند ہوگئے اور یوں ملک کے بیشتر علاقوں کو بجلی کی فراہم بند ہوگئی۔"

رائے سکنرر، سیکرٹری پانی و بجلی

انہوں نے کہا کہ حبکو پلانٹ کے ’ٹرپ‘ کر جانے کی وجہ سے منگلا اور تربیلا سمیت باقی گرڈ سسٹم بھی اوور لوڈ کی وجہ سے بند ہوگئے اور یوں ملک کے بیشتر علاقوں کو بجلی کی فراہم منقطع ہوگئی۔

رائے سکندر نے بتایا کہ پاکستان میں بجلی کے نظام میں ایک جگہ خرابی سے پورا نظام متاثر ہوتا ہے اور حبکو کی اچانک بندش کی وجہ سے پورے نظام کو درپیش خطرے کے پیشِ نظر دوسرے پاور پلانٹس کو نقصان سے بچانے کے لیے پورا سسٹم ہی بند کرنا پڑا۔

سیکرٹری پانی و بجلی کا کہنا تھا کہ فنی خرابی کی اطلاع ملتے ہی اس کی بحالی کا عمل شروع کر دیا گیا ہے اور رات ڈھائی بجے تک پشاور سے کالا شاہ کاکو تک بجلی بحال کی جا چکی ہے جبکہ ملک کے باقی علاقوں میں آنے والے چند گھنٹوں میں بجلی کی بحالی کا عمل شروع ہوگا۔

رائے سکندر کا کہنا تھا کہ یہ پاکستان میں بجلی کی اتنے بڑے پیمانے پر بندش کا تیسرا بڑا واقعہ ہے اور اس سے قبل 2005 اور 2009 میں بھی اس قسم کا بحران پیدا ہو چکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم پاکستان کے احکامات پر اس بریک ڈاؤن کی تحقیقات کے لیے انکوائری ٹیم تشکیل دے دی گئی ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔