نوبیل انعام کے لیےملالہ سمیت 259 نامزد

آخری وقت اشاعت:  منگل 5 مارچ 2013 ,‭ 20:46 GMT 01:46 PST

اس سال کے امن کے نوبیل انعام کے لیے کُل 259 نامزدگیاں موصول ہوئی ہیں جن میں طالبان کے حملے میں زخمی ہونے والی سوات کی کی ملالہ یوسفزئی کا نام بھی شامل ہے۔

نوبیل انعام کا اعلان کرنے والی خفیہ کمیٹی موصول ہونے والی نامزدگیوں کے نام عام نہیں کرتی تاہم وہ جن کو نامزد کرنے کا حق حاصل ہے وہ اپنی نامزدگیوں کو منظر عام پر لاتے ہیں۔

اس سال کے نوبیل انعام کے لیے ملالہ یوسفزئی کے نام کے علاوہ امریکی فوجی بریڈلی میننگ کا نام بھی شامل ہے۔ بریڈلی نے وکی لیکس کو امریکہ کے خفیہ دستاویزات فراہم کیے تھے۔

اس کے علاوہ پچاس تنظیموں کے نام بھی امن انعام کے لیے نامزد کیے گئے ہیں۔

ناروے کی نوبیل کمیٹی کے سیکریٹری کا کہنا ہے ’اس سال نامزدگیاں پوری دنیا سے موصول ہوئی ہیں۔ ان نامزدگیوں میں مشہور نام ہیں صدور اور وزرائے اعظم کے ناموں کے ساتھ کچھ غیر معروف افراد کے نام بھی شامل ہیں جو انسانیت کی مدد کے لیے کام کر رہے ہیں اور کچھ انسانی حقوق کے کارکن بھی ہیں۔‘

یاد رہے کہ پچھلے سال کا نوبیل امن انعام یورپی یونین کو دیا گیا تھا لیکن سب اس فیصلے سے متفق نہیں تھے۔ ناقدین کا کہنا تھا کہ امن انعام اس یونین کو دیا گیا ہے جو معاشی بحران کا سامنا کر رہی ہے۔

اس سال کے امن انعام کے لیے نامزدگیوں بھیجنے کی آخری تاریخ یکم فروری تھی۔ اس سال سب سے زیادہ نامزدگیاں موصول ہوئی ہیں۔ اس سے قبل سنہ 2011 میں 241 نامزدگیاں موصول ہوئی تھیں۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق اوسلو کے پیس ریسرچ انسٹیٹیوٹ کی ڈائریکٹر نے اس سال ملالہ یوسفزئی کو فیورٹ قرار دیا ہے۔ ان کے بقول ملالہ کے بعد عالمی سطح پر جنسی تشدد کے خلاف کام کرنے والے کونگو کے ڈاکٹر ڈینس مکویگ ہیں۔

ان کے مطابق نمبر تین پر روس سے تعلق رکھنے والی تین انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والی کارکن ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔