کراچی میں فائرنگ، شیعہ پروفیسر ہلاک

آخری وقت اشاعت:  پير 18 مارچ 2013 ,‭ 11:56 GMT 16:56 PST

واقعے کے بعد کراچی میں شیعہ اکثریتی علاقوں میں کشیدگی پائی جاتی ہے

کراچی میں نامعلوم مسلح افراد نے فائرنگ کر کے لیاقت آباد ڈگری کالج کے سابق پرنسپل اور شاعر پروفیسر سبطِ جعفر کو ہلاک کر دیا ہے۔

پروفیسر سبطِ جعفر کا تعلق شیعہ مسلک سے تھا اور وہ شہر کے معروف سوز و مرثیہ خواں بھی تھے۔

مقامی پولیس کے مطابق موٹر سائیکلوں پر سوار حملہ آوروں نے پیر کی دوپہر لیاقت آباد کے علاقے میں پروفیسر سبطِ جعفر کو اس وقت نشانہ بنایا جب وہ کالج سے اپنی اہلیہ کے ہمراہ واپس جا رہے تھے۔

پولیس ذرائع کے مطابق وہ کالج سے موٹرسائیکل پر نکلے ہی تھے کہ ان پر فائرنگ کی گئی تاہم اس واقعے میں ان کی اہلیہ محفوظ رہیں۔

حملہ آور فائرنگ کے بعد فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔ پولیس نے اس واقعے کی تحقیقات شروع کر دی ہیں۔

واقعے کے فوراً بعد ڈاکٹر سبطِ جعفر کو عباسی شہید ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسے۔

ان کی میت کو رضویہ میں واقع امام بارگاہ منتقل کر دیا گیا ہے۔

اس واقعے کے بعد کراچی میں شیعہ اکثریتی علاقوں میں کشیدگی پائی جاتی ہے جبکہ مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق سندھ میں اساتذہ کی تنظیموں نے اس واقعے پر منگل کو تعلیمی سرگرمیوں کے بائیکاٹ کا اعلان کیا ہے۔

کراچی میں ٹارگٹ کلنگ کے واقعات کافی عرصے سے جاری ہیں اور اس میں سیاسی جماعتوں کے علاوہ مذہبی جماعتوں کے کارکنوں کو بھی نشانہ بنایا جاتا رہا ہے۔

کراچی پولیس کے اعداد و شمار کے مطابق 2012 میں شہر میں دو ہزار تین سو افراد کو قتل کیا گیا اور انسانی حقوق کے لیے سرگرم ادارے ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان کے مطابق ان میں زیادہ تر افراد ایسے ہیں جنہیں لسانی، گروہی، سیاسی یا فرقہ وارانہ بنیاد پر ہدف بنا کر ہلاک کیا گیا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔