کراچی: رینجرز کی گاڑی پر حملہ، تین اہلکار ہلاک

Image caption کچھ عرصے قبل کراچی میں سچل رینجرز کے ہیڈ کوارٹر پر بھی بارود سے بھری گاڑی سے حملہ کیا گیا تھا

پاکستان کے صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی میں رینجرز کے ترجمان کے مطابق کورنگی کے علاقے میں رینجرز کی گاڑی پر حملے میں تین اہلکار ہلاک ہوئے ہیں۔

ڈی آئی جی شرقی طاہر نوید نے میڈیا کو بتایا کہ یہ واقعہ کورنگی نمبر پانچ میں پیش آیا۔

انہوں نے کہا کہ ابتدائی تفتیش کے مطابق بھٹائی رینجرز کی گاڑی پر دستی بم سے حملہ کیا گیا۔

واضح رہے کہ کچھ عرصے قبل کراچی کے علاقے نارتھ ناظم آباد میں سچل رینجرز کے ہیڈ کوارٹر پر بارود سے بھری گاڑی سے حملہ کیا گیا تھا۔

دریں اثنا کراچی میں پولیس کے مطابق کلعدم تنظیم لشکرِ جھنگوی کراچی کے امیر کو گرفتار کیا گیا ہے۔

کراچی میں سی آئی ڈی پولیس کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ سی آئی ڈی پولیس نے بدھ کو تھانہ سرجانی کے علاقے نور ٹاؤن میں فائرنگ کے تبادلے کے بعد کلعدم تنظیم ’لشکرِ جھنگوی کے امیر شیخ محمد اطہرعرف انورعرف اطہر کالا اور محمد شاہد عرف چورن کو گرفتار کیا۔‘

بیان کے مطابق گرفتار کیے گئے ملزمان فرقہ وارانہ ، سیاسی ، ڈاکٹروں، وکیلوں اور پولیس افسران کے ٹارگٹ کلنگ میں ملوث ر ہے ہیں۔

پولیس بیان میں کہا گیا ہے کہ ملزمان کا تعلق لشکرِ جھنگوی نعیم بخاری گروپ سے ہیں اور نعیم بخاری لشکرِ جھنگوی پاکستان کے سربراہ ہیں۔

جاری بیان کے مطابق ان ملزمان نے اپنے دوسرے ساتھیوں طارق اور شفیع عرف حاجی صاحب اور بٹ صاحب کے ہمراہ سید سبط جعفری پرنسپل گورنمنٹ کالج لیاقت آباد، قمرالحسن شاہ،عارف اور محمد عامر کو ہلاک کیا ہے۔

پولیس کے مطابق ملزمان کی نشاندہی پر بولیس نے سرجانی کے علاقے سے بھاری مقدار میں اسلحہ بھی برآمد کیا۔

اسی بارے میں