بجلی کی بچت، پنجاب میں دو چھٹیاں

Image caption صوبائی دارالحکومت لاہور میں بجلی کی لوڈشیڈنگ کا دورانیہ کم از کم بارہ گھنٹے ہے

پنجاب کی نگراں کابینہ نے صوبے میں بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے بحران کے باعث ہفتے میں دو چھٹیاں کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

یہ فیصلہ منگل کو صوبائی کابینہ کے اجلاس میں کیا گیا جس کی صدارت نگراں وزیراعلیْ نجم سیٹھی نے کی۔

صوبائی نگراں کابینہ نے مطالبہ کیا کہ پنجاب میں غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کو فوری طور ختم کیا جائے اور ملک میں بجلی کی یکساں لوڈشیڈنگ کی جائے۔

پنجاب میں اس وقت بجلی کی برترین لوڈشیڈنگ ہو رہی ہے اور صرف صوبائی دارالحکومت لاہور میں بجلی کی لوڈشیڈنگ کا دورانیہ کم از کم بارہ گھنٹے ہے۔

پنجاب کی نگراں کابینہ کے اجلاس میں بجلی کی لوڈشیڈنگ سے پیدا ہونے والی صورت حال کا تفصیلی جائزہ لیا گیا اور بجلی کے بچت کے لیے ہفتے میں دو تعطیلات کرنے کا اعلان کیا۔

اس سے پہلے گزشتہ برس سابق وزیر اعلیْ پنجاب شہباز شریف نے ہفتے میں دو چھٹیاں کرنے کی وفاقی حکومت کی تجاویز کی حمایت نہیں کی تھی۔

صوبائی کابینہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے نگراں وزیراعلیٰ نے کہا کہ وہ لوڈشیڈنگ کے مسئلے پر اپنی ٹیم کے ساتھ جلد نگراں وزیر اعظم سے ملاقات کریں گے اور لوڈشیڈنگ میں کمی کے لیے ٹھوس تجاویز دیں گے۔

پنجاب کابینہ نے وفاقی حکومت سے مطالبہ کیا کہ بجلی کی لوڈشیڈنگ پر مشترکہ مفادات کونسل کا اجلاس بلایا جائے جبکہ لوڈشیڈنگ میں کمی کے وفاقی حکومت اقدامات کرے۔

نگراں وزیر اعلیْ نے عوام سے اپیل کی کہ وہ لوڈشیڈنگ پر احتجاج سے اجتناب کریں اور املاک کو نقصان نہ پہنچایا جائے۔ ان کے بقول بجلی کی بچت کے لیے عوام حکومتی اقدامات میں تعاون کریں۔

نجم سیٹھی نے خبردار کیا کہ احتجاج کی آڑ میں کسی قانون ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

اسی بارے میں