ایم کیو ایم کا عمران خان کے خلاف احتجاج

Image caption کراچی پریس کلب کے باہر پیر کی شام کو متحدہ قومی موومنٹ کے کارکنوں کی ایک بڑی تعداد نے پہنچ کر احتجاج کیا

کراچی میں متحدہ قومی موومنٹ کے کارکنوں نے پاکستان تحریکِ انصاف کے سربراہ عمران خان کے خلاف احتجاج کیا ہے۔

ایم کیو ایم کے کارکن مطالبہ کر رہے تھے کہ عمران خان اپنے اس بیان پر معافی مانگیں جس میں انہوں نے زہرہ شاہد حسین کے قتل کا ذمہ دار ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین کو قرار دیا تھا۔

پاکستان تحریکِ انصاف کے سربراہ عمران خان نے ایک ٹویٹ میں پی ٹی آئی کی رہنما زہرہ شاہد حسین کے قتل کا ذمہ دار براہِ راست ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین کو قرار دیا تھا۔

کراچی پریس کلب کے باہر پیر کی شام کو متحدہ قومی موومنٹ کے کارکنوں کی ایک بڑی تعداد نے پہنچ کر احتجاج کیا، ان میں سے بعض کارکنوں نے عمران خان کی جوانی اور سیتا وائیٹ کی تصاویر اٹھا رکھی تھیں۔

مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے رکن قومی اسمبلی نبیل گبول نے عمران خان کو مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ وہ اپنا رویہ درست رکھیں اور ’ ہم لڑنا جانتے ہیں لیکن لڑائی اور فساد نہیں چاہتے، اب بھی وقت ہے عمران خان اپنی زبان کو لگام دو، ہم کارکنوں کو کتنا روکیں گے الطاف بھائی کارکنوں کو کتنا روکے گا۔‘

نبیل گبول کا کہنا تھا کہ حلقہ 250 پر دوبارہ انتخابات نے لوگوں کو تقسیم کر دیا ہے اور یہ کہ تحریک انصاف کہتی ہے کہ انہوں نے یہ نشست جیتی ہے لیکن انہیں یہ نشست ایم کیو ایم نے الطاف حسین کے صدقے میں دی ہے۔

اس احتجاج میں متحدہ قومی موومنٹ کی معروف قیادت نظر نہیں آئی، مقررین نے تحریکِ انصاف کی سوشل میڈیا مہم پر بھی شدید ناراضی کا اظہار کیا۔

احتجاج کے دوران ایم کیو ایم کے رہنما ڈاکٹر صغیر احمد کا کہنا تھا کہ عمران خان کو زہرہ شاہد حسین کے قتل میں شامل تفتیش کرنا چاہیے، آخر کس بنیاد پر انہوں نے پانچ منٹ کے اندر زہرہ شاہد کے قتل کا الزام متحدہ قومی موومنٹ پر عائد کردیا، وہ سمجھتے ہیں کہ عمران خان پہلے سے اس قتل کے بارے میں معلومات رکھتے تھے۔

یاد رہے کہ تحریک انصاف کی رہنما زہرہ شاہد حسین کو دو روز قبل ڈیفینس کے علاقے میں ان کے گھر کے دروازے پر گولی مارکر ہلاک کیا گیا تھا، ابتدائی طور پر پولیس نے اس واقعے کو ڈکیتی کا نتیجہ قرار دیا تھا بعد میں ڈرائیور کے بیان کی روشنی میں واقعے کو ٹارگٹ کلنگ قرار دیا گیا۔

دوسری جانب پاکستان کمیشن برائے انسانی حقوق نے کراچی میں کشیدگی اور تشدد میں اضافے پر تشویش کا اظہار کیا ہے اور تمام فریقین سے اپیل کی ہے کہ وہ معقول رویے کا مظاہرہ کریں۔

ایک بیان میں کمیشن نے پاکستان تحریک انصاف کی رہنما زہرہ شاہد کے قتل پر تشویش اظہار کیا ہے اور کہا کہ وہ امید کرتے ہیں کہ انتخابات کے نتیجے میں جنم لینے والے معاملات کو معقول اور غیر متشدد طرز عمل کے ذریعے اور جذبات کی رو میں بہے بغیر حل کر لیا جائے گا۔

کمیشن کا کہنا ہے کہ کراچی کے حلقہ قومی اسمبلی 250 میں جس طریقے سے پولنگ ہوئی یہ جمہوریت کے لیے قابل ستائش چیز ہے اور نہ ہی آزادانہ انتخابات کے لیے مثبت پیش رفت ہے۔ ایچ آر سی پی نے اپیل کی کہ شہریوں کے تحفظ کے ذمہ دار ادارے اور افراد بغیر کسی تاخیر کے اپنے فرض کا احساس کریں۔

اسی بارے میں