پنجاب، سندھ اور خیبر پختونخوا کے آئندہ مالی سال کے بجٹ

Image caption پنجاب اسمبلی میں بجٹ صوبائی وزیرِخزانہ پیش کریں گے

پاکستان کے تین صوبوں پنجاب، سندھ اور خیبر پختونخوا کے آئندہ مالی سال کے لیے بجٹ پیر کو متعلقہ صوبائی اسمبلیوں میں پیش کیے جا رہے ہیں۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق صوبہ پنجاب کے صوبائی وزیرِخزانہ میاں مجتبیٰ شجاع الرحمٰن مالی سال دو ہزار تیرہ چودہ کے لیے بجٹ صوبائی اسمبلی میں پیش کریں گے اور خیبر پختونخوا کے صوبائی وزیرِخزانہ سراج الحق آئندہ مالی سال کے لیے صوبائی بجٹ اسمبلی میں پیش کریں۔

سندھ اسمبلی میں صوبائی بجٹ صوبے کے وزیرِاعلیٰ قائم علی شاہ پیش کریں گے۔

وفاقی حکومت پہلے ہی 12 جون کو ملک کی قومی اسمبلی میں سنہ دو ہزار تیرہ، چودہ کے لیے 3985 ارب روپے حجم کا بجٹ پیش کر چکا ہے جو کہ گذشتہ مالی سال کے بجٹ کے مقابلے میں 24.4 فیصد زیادہ ہے۔

وفاقی وزیرِ خزانہ اسحاق ڈار نے قومی اسمبلی میں اپنی بجٹ تقریر کے دوران بتایا تھا کہ انھیں گذشتہ حکومت کی کارکردگی کی وجہ سے ’ٹوٹی پھوٹی معیشت‘ دیکھ کر افسوس ہوا اور ان کا کہنا تھا کہ ایسا معلوم ہو رہا تھا کہ معیشت خودکار طریقے یعنی ’آٹو پائلٹ‘ پر چل رہی تھی۔

پاکستان کی نو منتخب وفاقی حکومت نے اپنے پہلے بجٹ میں ترقیاتی منصوبوں کے لیے مجموعی طور پر ایک ہزار ارب سے زائد کی رقم مختص کی ہے۔

سالانہ ترقیاتی منصوبے 2013 اور 2014 کے مطابق وفاقی ترقیاتی منصوبوں کے لیے 540 ارب روپے مختص کیےگئے ہیں جبکہ صوبوں کا ترقیاتی بجٹ 615 ارب روپے ہے۔

وفاقی وزیر خزانہ کے دو ہزار تیرہ میں پاکستان پر قرضے کا بوجھ 14284 ارب روپے ہوگیا ہے۔

اٹھارویں ترمیم کے تحت زیادہ وسائل صوبوں کو منتقل کیے گئے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ صوبوں کو ترقیاتی منصوبے کے لیے زیادہ فنڈز دیے جا رہے ہیں۔

تیس جون کو ختم ہونے والے مالی سال کے لیے وفاقی ترقیاتی بجٹ کا حجم 360 ارب روپے تھا۔

اسی بارے میں