پشاور: خواتین کا پہلا پیرا ٹروپنگ کورس مکمل

Image caption بنیادی تربیتی پروگرام کے تحت پیرا ٹروپرز کو پرواز کے دوران پیرا شوٹ کو کنٹرول کرنا سکھایا جاتا ہے

پاکستان کی فوج کا کہنا ہے کہ اس نے پہلی بار کامیابی کے ساتھ خواتین آفیسرز پر مشتمل پیرا ٹروپنگ کورس مکمل کر لیا ہے۔

یہ تربیتی پروگرام پشاور میں قائم پیرا ٹروپنگ سکول میں پورا کیا گیا۔

آئی ایس پی آر کی ویب سائٹ پر جاری کیے جانے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ اس کورس میں سخت اور مشکل جسمانی تربیت کے علاوہ پیرا جمپنگ کا کورس بھی شامل تھا جس میں طیارے سے نکلنے، پیراشوٹ اڑانے اور اسے زمین پر اتارنے کی تکنیک کی تربیت شامل تھی۔

بیان کے مطابق اس بنیادی تربیتی پروگرام کے تحت پیرا ٹروپرز کو پرواز کے دوران پیرا شوٹ کو کنٹرول کرنا سکھایا جاتا ہے۔

پیرا ٹروپرز کو یہ بھی سکھایا جاتا ہے کہ ہنگامی صورت حال سے کیسے نمٹا جائے یا پھر دوسرے پیرا شوٹ سے ٹکرانے سے کیسے بچا جائے اور پانی پر کیسے اترا جائے۔

اس کورس کی کامیاب تکمیل پر تربیلا میں ایک تقریب کا انعقاد کیا گیا جن میں ان خواتین آفیسرز کو سند دی گئی۔

سپیشل سروس گروپ کے جنرل کمانڈنگ آفیسر میجر جنرل عابد رفیق نے انہیں پیرا ونگ والا امتیازی نشان عطا کیا۔

آئی ایس پی آر کے بیان کے مطابق پاکستانی فوج کی کل 24 خواتین افسروں نے اس پروگرام کے تحت تین ہفتوں پر مشتمل بنیادی ہوائی تربیت حاصل کی۔

کیپٹن سعدیہ پہلی خاتون افسر تھیں جنھوں نے ایم آئی17 ہیلی کاپٹر سے چھلانگ لگا کر تاریخ رقم کی جبکہ کیپٹن کرن اشرف کو بہترین پیرا ٹروپر کا خطاب دیا گيا۔

چیف آف آرمی سٹاف نے ان خواتین افسروں کے اعلی حوصلے کی تعریف کی اور انہیں کامیابی کے ساتھ تربیت مکمل کرنے پر مبارکباد دی۔

اسی بارے میں