ملالہ کے لیے سخاروف ہیومن رائٹس ایوارڈ، نوبیل کا فیصلہ کل

  • 10 اکتوبر 2013
Image caption ملالہ یوسفزئی کو امن کے نوبیل انعام کے لیے بھی نامزد کیا گیا ہے

خواتین کو تعلیم کا حق دلانے کے لیے کوشاں پاکستانی طالبہ ملالہ یوسفزئی نے یورپی یونین کا سخاروف ہیومن رائٹس ایوارڈ جیت لیا ہے۔

آزادیِ اظہار کے لیے دیا جانے والا یورپی یونین کا یہ ایوارڈ روسی ماہرِ طبیعیات آندرے سخاروف کی یاد میں دیا جاتا ہے۔

پچاس ہزار یورو مالیت کا یہ ایوارڈ یورپ میں حقوقِ انسانی کا سب سے بڑا ایوارڈ مانا جاتا ہے۔

اس سال اس ایوارڈ کے لیے ملالہ کے علاوہ امریکہ کی جانب سے نگرانی کے پروگرام کا راز افشا کرنے والے اہل کار ایڈورڈ سنوڈن بھی نامزد تھے۔

ماضی میں یہ عالمی ایوارڈ حاصل کرنے والوں میں برما میں جمہوریت کی خاطر زندگی وقف کر دینے والی سیاستدان آنگ سان سوچی سمیت دنیا کی کئی نامور شخصیات شامل ہیں۔

ملالہ یوسفزئی کو اس سال امن کے نوبیل انعام کے لیے بھی نامزد کیا گیا ہے جس کا فیصلہ جمعہ گیارہ اکتوبر کو ہوگا۔

سخاروف ایوارڈ سے قبل ملالہ کو کئی عالمی ایوارڈ مل چکے ہیں۔

گذشتہ ماہ ہی انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل نے انہیں 2013 کے لیے ’ضمیر کا سفیر‘ قرار دیا تھا جبکہ ہالینڈ کی تنظیم ’کڈز رائٹس فاؤنڈیشن‘ کی جانب سے انہیں ’انٹرنیشنل چلڈرنز پیس پرائز‘ بھی دیا گیا ہے۔

ملالہ نے اپنی سولہویں سالگرہ پر رواں برس ہی اقوامِ متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب بھی کیا تھا جس میں ان کا کہنا تھا کہ شدت پسندی کا خاتمہ تعلیم کے فروغ ہی سے ممکن ہے۔

پاکستان کی وادی سوات سے تعلق رکھنے والی ملالہ یوسفزئی کو خواتین کے لیے تعلیم عام کرنے کی کوششوں پر طالبان نے اکتوبر 2012 میں نشانہ بنایا تھا۔اس حملے میں زخمی ہونے کے بعد ان کا ابتدائی علاج پاکستان میں کیا گیا اور بعد میں انہیں برطانیہ منتقل کردیا گیا جہاں اب وہ مقیم ہیں۔

ملالہ یوسفزئی نے 2009 میں سوات سے بی بی سی اردو کے لیے اس وقت ڈائری لکھی تھی جب یہ علاقہ طالبان کے زیرِ اثر تھا۔ اس وقت تو انہوں نے یہ ڈائری ایک فرضی نام سے تحریر کی تھی تاہم بعد میں انہوں نے منظرِ عام پر آنے کا فیصلہ کیا تھا۔

اسی بارے میں