مستونگ: ایران جانے والے زائرین کی بس کے قریب دھماکہ

Image caption اس سے پہلے بھی شیعہ زائرین کی بسوں کو متعدد بار نشانہ بنایا جا چکا ہے

پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں حکام کے مطابق ایران جانے والے شیعہ زائرین کی دو بسوں کے قریب دھماکے میں ایف سی کے دو اہلکار ہلاک ہو گئے ہیں۔

ایف سی حکام نے بی بی سی کو بتایا کہ سنیچر کو ایف سی اور لیویز اہلکاروں کی حفاظت میں دونوں بسیں جب ضلع مستونگ کے علاقے درنگڑ میں پہنچی تو وہاں سڑک کنارے کھڑی ایک مشکوک گاڑی کو دیکھ کی رک گئیں۔

سکیورٹی گاڑیوں میں موجود دو ایف سی اہلکار جب اس مشکوک گاڑی کو چیک کرنے کے لیے اس کے قریب پہنچے تو دھماکہ ہو گیا۔

حکام کے مطابق دھماکے میں ایف سی کے دونوں اہلکار ہلاک ہو گئے ہیں جبکہ مسافر محفوظ رہے ہیں۔

حکام کے مطابق ابھی تک یہ واضح نہیں کہ یہ ایک ریموٹ کنٹرول دھماکہ تھا۔

صوبہ بلوچستان میں شیعہ برادری پر اس طرح کے حملوں کا یہ پہلا واقعہ نہیں ہے۔

اس سے پہلے بھی کوئٹہ تافتان قومی شاہراہ پر مستونگ کے علاقے میں ایران میں زیارتوں کے لیے کوئٹہ سے جانے والے یا ایرن سے واپس آنے والے زائرین پر کئی حملے ہو چکے ہیں جس میں سے زیادہ تر حملوں کی ذمہ داری کالعدم لشکرجھنگوی نے قبول کی ہے۔

اس کے علاوہ کوئٹہ میں شیعہ ہزارہ برادری پر بھی آئے روز حملے ہوتے ہیں۔ ان حملوں کے خلاف صوبے میں شیعہ برادری کئی بار احتجاجی مظاہرے اور شٹر ڈاؤن ہڑتال کی چکی ہے۔

اسی بارے میں