’چوہدری نثار کے خلاف تحریک استحقاق لائیں گے‘

Image caption اعتزاز احسن کے مطابق سینیٹ میں قائدِ ایوان نے چوہدری نثار کی جانب سے معذرت کی یقین دہانی کروائی تھی

پاکستان کے ایوانِ بالا میں قائد حزب اختلاف اور پیپلز پارٹی کے رہنما چوہدری اعتزاز احسن نے کہا ہے کہ اگر وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے سینیٹ میں اپوزیشن کے ارکان سے اپنے رویے پر معذرت نہ کی تو اُن کے خلاف تحریکِ استحقاق لائی جائے گی۔

بدھ کو سینیٹ کے اجلاس میں خیبر پختونخوا میں گزشتہ پانچ ماہ کے دوران شدت پسندی کے واقعات میں ہلاک ہونے والے افراد کے اعداد و شمار پیش کرتے ہوئے وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان کی اعتزاز احسن اور حزب اختلاف کے دیگر سینیٹرز سے تلخ کلامی ہوئی تھی جس پر اپوزیشن جماعتوں نے اجلاس کا بائیکاٹ کیا تھا۔

وزیر داخلہ کے بقول گُذشتہ پانچ ماہ کے دوران خیبر پختونخوا میں شدت پسندی کے 136 واقعات ہوئے جن میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 120 تھی۔

اس پر عوامی نیشنل پارٹی سے تعلق رکھنے والے سینیٹر زاہد خان کا کہنا تھا کہ وزیر داخلہ ایوان میں غلط اعداد و شمار پیش کر رہے ہیں اور اتنے افراد تو پشاور میں چرچ پر ہونے والے خودکش حملے اور ملازمین کی بس پر ہونے والے دھماکے میں ہلاک ہوئے ہیں۔

نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق جمعرات کو بھی سینیٹ کا اجلاس اپوزیشن کی جماعتوں کے بائیکاٹ کی وجہ سے جاری نہیں رہ سکا۔ اجلاس کے دورا ن دو مرتبہ کورم کی کمی کی نشاندہی کی گئی جس کے بعد اجلاس جمعے تک ملتوی کر دیا گیا۔

Image caption جمعرات کو بھی سینیٹ کا اجلاس اپوزیشن کی جماعتوں کے بائیکاٹ کی وجہ سے جاری نہیں رہ سکا

پاکستان پیپلز پارٹی، عوامی نیشنل پارٹی اور پاکستان مسلم لیگ قاف سے تعلق رکھنے والے سینیٹ کے ارکان نے اجلاس کا بائیکاٹ کیا جبکہ اپوزیشن کی ایک جماعت متحدہ قومی موومنٹ کے ارکان اجلاس میں موجود رہے۔

چوہدری اعتزاز احسن نے جمعرات کو میڈیا کے نمائندوں کو بتایا کہ وزیرِ داخلہ چوہدری نثار علی خان نے حکومت اور پارلیمنٹ کو یرغمال بنا رکھا ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ حکومت کے ارکان بھی چوہدری نثار سے نالاں ہیں اور وہ بھی اپوزیشن کے بائیکاٹ سے خوش ہیں۔

اُنہوں نے کہا کہ حکومت نے جس شخص کو طالبان کے ساتھ مذاکرات کرنے کا اختیار دیا ہے اُس کے اعداد و شمار ہی غلط ہیں۔

اعتزاز احسن کا کہنا تھا کہ سینیٹ میں قائد ایوان راجہ ظفرالحق نے اپوزیشن ارکان کو یقین دہانی کروائی تھی کہ وزیر داخلہ ایوان میں اپنے رویے کی معذرت کریں گے لیکن ایسا نہیں ہوا۔

سینیٹ میں قائد حزب اختلاف کا کہنا تھا کہ سینیٹ کے اجلاس کے ایجنڈے میں قیمیتوں میں اضافہ، ملک میں امن و امان کی صورت حال اور آئین کے ارٹیکل چھ کو زیر بحث لانا تھا جبکہ حکومت اس سے راہِ فرار اختیار کرنا چاہتی ہے۔

اُنہوں نے کہا کہ رواں اجلاس میں حکومت اپوزیشن کے سوالات سے بچنا چاہتی ہے لیکن اپوزیشن کی جماعتیں حکومت کو بھاگنے نہیں دیں گی۔

اسی بارے میں