پاکستانی پارلیمان میں حکیم اللہ کی ہلاکت پر بحث متوقع

Image caption وفاقی وزیرِ اطلاعات کے مطابق پارلیمان کے اجلاس کی بہت اہمیت ہے

پاکستان میں پارلیمان کے دونوں ایوانوں کے اجلاس پیر کو منعقد ہو رہے ہیں جن میں تحریکِ طالبان پاکستان کے امیر حکیم اللہ محسود کی ڈرون حملے میں ہلاکت کے بعد کی صورتحال پر بحث متوقع ہے۔

حکیم اللہ محسود اپنے چار ساتھیوں سمیت جمعہ کو قبائلی ایجنسی شمالی وزیرستان کے علاقے ڈانڈے درپہ خیل میں امریکی جاسوس طیارے سے داغے گئے میزائل کا نشانہ بنے تھے۔

پاکستانی حکومت نے اس حملے کو امن کوششوں کو سبوتاژ کرنے کی کوشش اور مذاکرات پر شبِ خون مارنے کے مترادف قرار دیا تھا اور کہا تھا کہ اس سے ملک میں قیام امن کے لیے تحریک طالبان پاکستان کے ساتھ بات چیت کی کوششوں پر منفی اثر پڑے گا۔

وفاقی وزیرِ اطلاعات پرویز رشید نے اتوار کی شب بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ گزشتہ دو دن میں رونما ہونے والے واقعات کے تناظر میں پارلیمان کا اجلاس اہم ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’پارلیمان کی اہمیت سب سے زیادہ ہے کیونکہ اس کے اجلاس میں تمام سیاسی جماعتیں موجود ہوں گی جو اس فیصلے کی سٹیک ہولڈر ہیں کہ دہشتگردی کے مسئلے کا حل بات چیت سے نکالا جائے۔‘

Image caption حکیم اللہ محسود جمعہ کو ڈانڈے درپہ خیل میں ڈرون حملے کا نشانہ بنے تھے

انہوں نے یہ بھی کہا کہ ’ہم دوسری جماعتوں کا موقف سنیں گے تاکہ ہمارے سامنے پاکستانی عوام کے ہر طبقۂ فکر سے سوچ رکھنے والے کا نقطۂ نظر سامنے آ سکے۔‘

ریڈیو پاکستان کے مطابق وزیراعظم پاکستان نے پیر کو اسلام آباد میں وفاقی کابینہ کا اجلاس بھی طلب کیا ہے جس میں ملک کی امن وامان کی صورتحال پر غور ہوگا اور وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان داخلی سلامتی کی موجودہ صورتحال پر کابینہ کو بریفنگ دیں گے۔

خیال رہے کہ وزیرِ داخلہ چوہدری نثار نے اس ڈرون حملے کے اگلے دن ایک پریس کانفرنس میں کہا تھا کہ حکیم اللہ محسود کا قتل صرف ایک فرد کا قتل نہیں بلکہ قیامِ امن کی کوششوں کا قتل ہے۔

وزیر داخلہ نےیہ بھی کہا تھا کہ پاکستان کے لیے یہ مشکل کی گھڑی ہے اور اسے اپنے دوستوں اور دشمنوں میں تمیز کرنی ہے اور یہ بھی جاننا ہے کہ پاکستان کے موجودہ حالات کا ذمہ دار کون ہے۔

پاکستان نے اسلام آباد میں امریکی سفیر کو دفتر خارجہ طلب کر کے اس حملے پر احتجاج بھی کیا تھا جس پر امریکی محکمۂ خارجہ کے ایک ترجمان نے کہا کہ طالبان سے بات چیت کرنا پاکستان کا داخلی معاملہ ہے۔

دوسری جانب تحریک طالبان کے ایک سرکردہ رہنما نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ تاحال کسی طالبان کمانڈر کو بھی تحریک طالبان پاکستان کا نیا سربراہ مقرر نہیں کیا گیا اور تمام ’ذمہ داروں‘ سے رائے طلب کئی گئی ہے۔

اسی بارے میں