بھارت جانے والے پاکستانیوں کے لیے پولیو ڈراپس لازمی

Image caption رواں سال پاکستان میں پولیو کے کیسز کی تعداد میں 24 فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا

بھارتی حکومت نے پاکستان سے بھارت جانے والے تمام پاکستانیوں کے لیے پولیو کی ویکسین پینا لازمی قرار دے دیا ہے۔

اسلام آباد میں بھارتی ہائی کمیشن کی طرف سے جاری کیے گئے ایک ہدایت نامے کے مطابق 30 جنوری 2014 سے پاکستانی بچوں اور بالغوں کے بھارت میں داخلے کے لیے ضروری ہوگا کہ انھوں نے اس سفر سے کم از کم چھ ہفتے پہلے پولیو کے قطرے پیے ہوں۔

ہائی کمیشن کے مطابق مسافروں کو قطرے پینے کا مصدقہ سرٹیفیکیٹ بھی جمع کروانا ہو گا۔

حکام کے مطابق ایک بار قطرے پینے کے بعد ایک برس تک دوبارہ اس کی ضرورت نہیں ہوگی۔

بیان میں وضاحت کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ بھارت کو پولیو سے پاک کرنے کے لیے بہت جدوجہد کی گئی ہے اور یہ قدم اس لیے اٹھایا گیا ہے تاکہ بھارت کے پولیو سے پاک ملک کا درجہ برقرار رہ سکے۔

بھارتی حکام کے مطابق اس نئے ضابطے کا اطلاق پاکستان کے علاوہ افغانستان اور نائجیریا کے شہریوں پر بھی ہوگا جب کہ ان تینوں ممالک کا سفر کرنے کے خواہش مند بھارتی شہریوں کو بھی پولیو کی ویکسین پینا ہوگی۔

خیال رہے کہ دنیا میں پاکستان، افغانستان اور نائجیریا ہی وہ تین ممالک ہیں جہاں پولیو کا مرض پایا جاتا ہے۔

اقوامِ متحدہ کے ادارہ برائے صحت ڈبلیو ایچ او کا کہنا ہے کہ گذشتہ سال کی نسبت رواں سال پاکستان میں پولیو کے کیسوں کی تعداد میں 24 فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔

ادارے کے مطابق پاکستان واحد ملک ہے جس میں اس سال نہ صرف سب سے زیادہ پولیو کیس سامنے آئے بلکہ یہ وائرس پاکستان سے دیگر ممالک تک بھی پھیلا۔

پاکستان کے برعکس نائجیریا میں اس بار پولیو کے نصف سے بھی کم مریض سامنے آئے جبکہ افغانستان میں بھی 70 فیصد کمی دیکھنے کو ملی۔

اسی بارے میں