’عدالت فیصلہ کرے کہ ریاست کی توہین ہوئی یا نہیں‘

Image caption مقدمے میں اصل مدعی پاکستان کی ریاست اور آئین ہے: نواز شریف

پاکستان کے وزیراعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے خلاف غداری کا مقدمہ کسی فردِ واحد کے خلاف مقدمہ نہیں اور اس میں اصل مدعی پاکستان کی ریاست ہے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ عدالت کو ہی فیصلہ کرنا ہے کہ تین نومبر کو ریاست کی توہین ہوئی ہے یا نہیں۔

جمعرات کو سابق صدر جنرل ریٹائرڈ مشرف کو غداری کے مقدمے میں اسلام آباد میں خصوصی عدالت کے سامنے پیشی کے لیے طلب کیا گیا تھا لیکن انھیں دل کی تکلیف کے باعث راولپنڈی میں فوج کے ادارے برائے امراض قلب میں منتقل کر دیا گیا جہاں وہ اس وقت زیرعلاج ہیں۔

مشرف کے ملک سے جانے کی قیاس آرائیاں

مشرف کی صحت، رپورٹ پانچ جنوری کو

پرویز مشرف کے خلاف غداری کے مقدمے کی سماعت اور ان کے بیمار ہونے کے بعد وزیراعظم نواز شریف کا یہ پہلا بیان تھا۔

وزیراعظم ہاؤس سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق نواز شریف نے نجی ٹی وی چینل سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’چونکہ معاملہ عدالت کے سامنے ہے اس لیے ان کا کچھ کہنا مناسب نہ ہو لیکن اس مقدمے کے میرٹ سے ہٹ کر یہ ضرور کہوں گا کہ اس مقدمے میں اصل مدعی پاکستان کی ریاست اور آئین ہے۔‘

انھوں نے مزید کہا کہ عدالت نے یہ طے کرنا ہے کہ تین نومبر کا اقدام آئین کے آرٹیکل 6 کے دائرے میں آتا ہے کہ نہیں۔

’یہ مقدمہ فردِ واحد کا نہیں ہے، تاریخ کے اس موڑ پر اس بات کا فیصلہ بھی ہونا چاہیے کہ ہم اپنا آئین قانون اور نظامِ انصاف رکھنے والی ایک مہذب جمہوری ریاست ہیں کہ نہیں۔ اگر قانون کی نظر میں ہر شہری برابر ہے تو ہر شہری کو عدالت کے سامنے جوابدیہ بھی ہونا چاہیے۔ یہ فیصلہ کرنا عدالت کا کام ہے کہ وہ معصوم ہے یا مجرم۔‘

دوسری جانب مقامی ذرائع ابلاغ میں سابق صدر جنرل پرویز مشرف کو عدالت جاتے ہوئے راستے میں پیدا ہونے والی دل کی تکلیف کے علاج کے لیے بیرون ملک چلے جانے کی قیاس آرائیوں کا طوفان کھڑا ہو گیا ہے۔

انھی قیاس آرائیوں کے درمیان ہی سعودی وزیر خارجہ کی سنیچر کو پاکستان آمد کی خبر کے ساتھ ہی افواہ ساز فیکٹری کی پیداوار میں شدت پیدا ہو گئی۔ ہر ٹی وی ٹاک شو اور اخبار میں یہی خبر زیر بحث ہے۔

Image caption مشرف اس وقت راولپنڈی کے فوجی ہسپتال میں زیرعلاج ہیں

اس سے پہلے جمعرات کو ہی پرویز مشرف کی ناسازیِ طبع کی وجہ سے اسلام آباد میں ان کے خلاف غداری کے مقدمے کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت نے ان کی گرفتاری کے احکامات نہ دینے اور حاضری سے استثنیٰ دیتے ہوئے کہا تھا کہ وہ چھ جنوری کو آئندہ سماعت پر اس معاملے کو دوبارہ سنے گی۔

یاد رہے کہ سابق فوجی صدر کے خلاف آئین توڑنے کے الزام میں غداری کے مقدمے کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت نے ابھی ان پر فردِ جرم عائد کرنا ہے۔

وفاقی حکومت نے پرویز مشرف کے خلاف آئین توڑنے اور تین نومبر سنہ 2007 کو ملک میں ایمرجنسی لگانے پر غداری کا مقدمہ شروع کرنے کی استدعا کی تھی۔ پاکستانی آئین کی دفعہ چھ کی خلاف ورزی کرنے کی سزا موت اور عمر قید ہے۔

اسی بارے میں