پولیو ٹیم کی محافظ پولیس پر حملہ، سات ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اس واقعے میں سات افراد مارے گئے تاہم پولیو ٹیم کا کوئی کارکن ہلاک یا زخمی نہیں ہوا

پاکستان کے صوبہ خیبر پختون خوا کے ضلع چارسدہ میں حکام کا کہنا ہے کہ پولیو ٹیموں کی حفاظت پر مامور پولیس وین پر ہونے والے ایک بم حملے چھ پولیس اہل کاروں سمیت سات افراد ہلاک اور چار زخمی ہوگئے ہیں۔

پولیس کے مطابق یہ حملہ بدھ کی صبح چارسدہ میں سرڈھیری کے مقام پر بازار کے علاقے میں پیش آیا۔

چارسدہ کے ضلعی پولیس سربراہ شفیع اللہ خان نے بی بی سی کو بتایا کہ پولیس اہل کار پولیو ٹیموں کو سکیورٹی دینے کےلیے ایک وین میں ڈیوٹی پر جارہے تھے کہ سڑک کے کنارے نصب ایک ریموٹ کنٹرول بم حملے کا نشانہ بن گئے۔ انھوں نے کہا کہ حملے میں سات افراد ہلاک اور چار زخمی ہو گئے۔

مرنے والوں میں چھ پولیس اہل کار اور ایک بچہ شامل ہیں۔ دھماکے میں پولیس وین مکمل طور پر تباہ ہوگئی ہے۔ زخمیوں کو چارسدہ سول ہسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔ تاہم اس حملے میں پولیو ٹیموں کا کوئی کارکن ہلاک یا زخمی نہیں ہوا۔

پولیس افسر کا کہنا تھا کہ دھماکے کے بعد علاقے میں سرچ آپریشن شروع کردیا گیا ہے۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ جائے وقوعہ کے اردگرد علاقوں سے کچھ مشتبہ افراد کو بھی حراست میں لیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ ضلع چارسدہ میں پچھلے دو دنوں میں یہ تیسرا بم حملہ ہے۔ اس سے پہلے ہونے والے دھماکوں میں پانچ افراد زخمی ہوئے تھے۔

یادر رہے کہ پاکستان بھر میں پیر کو پولیو مہم کا آغاز کردیا گیا تھا جس کا آج تیسرا دن ہے۔ خیبر پختون خوا کے تین اضلاع پشاور، ہری پور اور چترال میں بعض وجوہات کی بنا پولیو سے بچاؤ کے کو مہم موخر کردیا گیا ہے۔

یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ خیبر پختون خوا میں گذشتہ چند دنوں سے پولیس اور فوج پر حملے میں اضافہ ہو رہا ہے۔ اس سے قبل بنوں میں بھی فوجی چھاؤنی کے علاقے میں سکیورٹی فورسز کے قافلے کو نشانہ بنایا گیا تھا جس میں 26 اہل کار ہلاک ہوئے تھے۔

اسی بارے میں