بی بی سی کی رپورٹ بدنیتی پر مبنی ہے: الطاف حسین

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption کسی بھی بین الاقوامی طاقت کے آگے سر نہیں جھکاؤں گا: الطاف حسین

متحدہ قومی موومنٹ نے ڈاکٹر عمران فاروق قتل کیس کی تحقیقات کے بارے میں بی بی سی کی حالیہ رپورٹ کو ’بددیانتی‘ پر مبنی قرار دیتے ہوئے ادارے کے خلاف قانونی چارہ جوئی کرنے کا اعلان کیا ہے۔

اس سے پہلے متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین نے کہا ہے کہ تحریک کے آغاز سے ہی ان کے خلاف سازشیں شروع کردی گئی تھیں۔

کراچی میں ایک پریس کانفرس سے خطاب کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے ڈپٹی کنوینئر خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ’دستاویزی فلم میں کئی الزام بھی لگائےگئے جن میں یہ کہا گیا کہ ان (الطاف حسین) پر قتل کے30 مقدمات ہیں لیکن بددیانتی یہ ہے کہ یہ نہیں بتایا گیا کہ ان تمام مقدمات میں ان کو بری کیا جا چکا ہے۔‘

انھوں نے کہا کہ جن دو افراد کا نام لیا جا رہا ہے ان سے ایم کیو ایم کا کوئی تعلق یا واسطہ نہیں ہے اور اگر وہ افراد برطانیہ سے نکل گئے ہیں تو یہ ایم کیو ایم کی ذمہ داری نہیں بلکہ برطانوی انتظامیہ کی ذمہ داری تھی۔

ایم کیو ایم کے قانونی مشیر سینٹر فروغ نسیم نے کہا کہ وہ بی بی سی کی رپورٹ کا ’ٹرانسکرپٹ‘ تیار کر رہے ہیں اور قانونی چارہ جوئی کریں گے اور ہمارے پاس تمام آپشن موجود ہیں۔

پریس کانفرس سے خطاب میں ایم کیو ایم کے رہنما ڈاکٹر فاروق ستار نے کہا کہ دستاویزی فلم کے ذریعے ایم کیو ایم اور الطاف حسین کے خلاف میڈیا ٹرائل کیا جا رہا ہے۔

انھوں نے الزام عائد کیا کہ لندن میٹروپولیٹن پولیس اندھیرے میں کوشش کر رہی ہے کہ کسی طرح اس کا تیر نشانے پر لگ جائے۔

اس پریس کانفرس سے پہلے ایم کیو ایم کے سربراہ الطاف حسین نے جمعرات کو ایک بیان میں کہا: ’میں پوری قوم کو بتا دینا چاہتا ہوں کہ میں نے پاکستان میں باطل قوتوں کے آگے سر نہیں جھکایا، قید وبند کی صعوبتیں برداشت کیں اور موت کو کئی مرتبہ قریب سے دیکھنے کے باوجود اپنا مشن جاری رکھا۔‘

الطاف حسین نے کہا کہ سازشوں کے ذریعے میرے گرد جال بچھانے کے علاوہ بین الاقوامی سطح پر مجھ پر طرح طرح کے جھوٹے الزامات عائد کیے جا رہے ہیں۔

’آج میرے خلاف بین الاقوامی سطح پر نہ صرف منفی پروپگینڈے کیے جا رہے ہیں بلکہ جھوٹے الزامات کے تحت مقدمات بنانے کی سازشوں کا مضبوط جال بھی بچھایا گیا ہے۔‘

ایم کیو ایم کے قائد نے کہا کہ میں عوام کو بتانا چاہتا ہوں کہ میں کسی بھی بین الاقوامی طاقت کے آگے سر نہیں جھکاؤں گا۔

الطاف حسین نے عوام کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اگر مجھے کوئی نقصان پہنچے تو میری آپ سے اپیل ہے کہ آپ میرے حق پرستانہ سبق کو ہرگز نہ بھولیں۔

الطاف حسین نے اپنے بیان میں ایم کیوایم کی رابطہ کمیٹی، منتخب نمائندوں اور ملک کے تمام ذمہ داران اور کارکنان سے کہا کہ وہ اس بیان کا انتہائی سنجیدگی سے نوٹس لیں اور میری بتائی ہوئی باتوں پر عمل کریں۔

ان کا کہنا تھا کہ تمام ذمہ داران اپنے فرائضِ منصبی کو پہچانتے ہوئے ان پر عمل کریں اور کسی بھی قسم کی غفلت کا مظاہرہ نہ کریں۔

اسی بارے میں