لاہور:توہینِ رسالت کے عیسائی ملزم کے لیے موت کی سزا

Image caption جوزف کالونی پر حملے کے مقدمے میں نامزد 43 افرد کو ضمانت پر رہائی مل چکی ہے

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں ایک عدالت نے توہینِ رسالت کے ملزم مسیحی نوجوان ساون مسیح کو سزائے موت دینے کا حکم دیا ہے۔

ایڈیشنل اینڈ سیشن جج غلام مرتضیٰ نے جمعرات کی سہ پہر سینٹرل جیل اچھرہ میں مقدمے کی سماعت کے بعد فیصلہ سنایا۔

’اقلیتوں کو انصاف دلوانا شاید کبھی ترجیح نہیں رہا‘

ساون مسیح پر الزام تھا کہ انھوں نے گذشتہ برس اپنے مسلمان دوست سے جھگڑے کے دوران پیغمبرِ اسلام کے بارے میں گستاخانہ کلمات ادا کیے تھے۔

اس واقعے پر ہزاروں نامعلوم افراد نے ایک ہجوم کی صورت میں لاہور کی مسیحی آبادی جوزف کالونی پر دھاوا بول کر 100 سے زائد مکانات کو جلا دیا تھا۔

ساون مسیح کے وکیل ایڈوکیٹ طاہر بشیر نے بی بی سی اردو کو بتایا کہ عدالتی فیصلے میں 295 پی پی سی کے تحت ان کے موکل کو سزائے موت اور دو لاکھ روپے جرمانہ کی سزا سنائی گئی ہے اور اگر وہ یہ جرمانہ ادا نہیں کر پاتے تو پھر انھیں چھ ماہ قید کاٹنی ہوگی۔

ان کا کہنا ہے کہ انھیں فیصلے کی کاپی موصول ہو گئی ہے اور اب وہ سات دن کے اندر ہائی کورٹ میں اپیل کریں گے۔

طاہر بشیر کا کہنا تھا کہ ’عدالت بااختیار ہے لیکن میرے خیال سے اس مقدمے میں بھی توہین عدالت کے دیگر مقدمات کی طرح بہت زیادہ دباؤ تھا۔‘

پاکستان کرسچیئن نیشنل پارٹی کے سینیئر وائس چیئرمین مارٹ جاوید مائیکل نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’یہ فیصلہ انسانیت کی تذلیل ہے۔ مذہبی بنیاد پر ذاتی انتقام لینا درست نہیں اور انھیں مسیحی ہونے کی سزا ملی ہے۔‘

جاوید مائیکل کا یہ بھی کہنا تھا کہ وہ جمعے کو فیصلے کی نقل ملنے کے بعد ہائی کورٹ میں اپیل دائر کریں گے۔

ساون مسیح کے والد چمن مسیح نے بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’آج رہائی کا دن تھا۔ وہ کہتے تھے سب ٹھیک ہے لیکن شام کو انھوں نے فون کر کے فیصلہ سنایا۔ جب انھوں نے میرے بچے پہ ناجائز الزام لگایا ہے۔ یہ بالکل غلط ہے، جھوٹ ہے۔‘

ساون کے بھائی سلیم نے کہا کہ ’ہماری کالونی کو آگ لگائی گئی اور اب ہم سب لوگ حیران ہیں کہ موت کی سزا اور ساتھ جرمانے کی اتنی بڑی رقم مانگی جا رہی ہے کیا یہ انصاف ہے؟‘

اس مقدمے کا آغاز آٹھ مارچ 2013 کو پیش آنے والے ایک واقعے کے باعث ہوا تھا جس میں جوزف کالونی کے رہائشی بچپن کے دو دوستوں ساون مسیح اور شاہد عمران کے درمیان سنوکر کھیلتے ہوئے جھگڑا ہوا اور پھر بڑھتے بڑھتے بات ایسی بڑھی کہ ساون پر توہین مذہب کا الزام لگ گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ساون مسیح پر توہینِ رسالت کے الزام کے بعد مشتعل ہجوم نے جوزف کالونی پر دھاوا بول کر مکانات اور دکانوں کو نقصان پہنچایا تھا

شاہد کی جانب سے ساون کے خلاف ایف آئی آر کے اندراج کے بعد انھیں آٹھ مارچ کو ہی حراست میں لے لیا گیا تھا۔

اس معاملے کی خبر پھیلنے کے بعد آٹھ مارچ کی شام کو بادامی باغ کے انڈسٹریل ایریا کے قریب واقع اس رہائشی کالونی پر مشتعل ہجوم نے دھاوا بول دیا تھا۔ یہ حملے دو دن تک جاری رہے تھے اور ان میں 125 سے زیادہ مکانات اور دکانوں کو نذرِ آتش کر دیا گیا تھا اور یہ کالونی مکمل طور پر تباہ ہوگئی تھی۔

ان حملوں میں دو گرجا گھروں کو بھی توڑ پھوڑ کے بعد آگ لگا دی گئی تھی جس سے انھیں جزوی طور پر نقصان پہنچا تھا۔

پاکستان کی سپریم کورٹ نے اس واقعے کا از خود نوٹس لیا تھا اور اب صورتحال یہ ہے کہ جوزف کالونی پر حملے کے مقدمے میں نامزد 43 افرد کو ضمانت پر رہائی مل چکی ہے تاہم ان کی رہائی کے خلاف کی گئی اپیل زیرِ سماعت ہے۔

پاکستان میں کسی مسیحی آبادی پر حملے کا یہ پہلا واقعہ نہیں تھا اور ماضی قریب میں گوجرہ اور شانتی نگر میں بھی ایسے واقعات پیش آ چکے ہیں لیکن آج تک نہ تو ان واقعات سے متعلق حقائق منظرخ عام پر آسکے اور نہ ہی کسی کو ذمےدار ٹھہرا کر سزا دی گئی ہے۔

اسی بارے میں