لاہور: غبارے پھٹنے سے 20 بچے جھلس گئے

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption غبارے ایک فلائی اوور کے افتتاح کے موقع پر چھوڑے گئے

صوبہ پنجاب کے دارالحکومت لاہور کے ایک چلڈرن پارک میں گیس سے بھرے غبارے پھٹنے سے کم از کم 20 بچے جھلس گئے ہیں۔

خیال کیا جا رہا ہے کہ یہ وہی غبارے ہیں جو لاہور میں ایک فلائی اوور کے افتتاح کے موقع پر فضا میں چھوڑے گئے تھے۔

لاہور کے نواحی علاقے کماہاں میں ایک پارک میں بچے کھیل رہے تھے جب انھوں نے فضا سے رنگ برنگے غبارے پارک میں گرتے دیکھے۔

بچوں نے یہ منظر دیکھا اور کرکٹ چھوڑ کر غبارے پکڑنے میں لگ گئے جس کے دوران اچانک غبارے پھٹے اور آگ لگ گئی جس کے نتیجے میں بچے جھلس گئے۔

ہپستال کے عملے کے مطابق صرف ایک بچہ 35 فیصد تک جھلسا ہے جبکہ باقی بچوں کے چہرے کیمیکل کی زد میں آئے ہیں اور سب کی حالت بظاہر خطرے سے باہر ہے۔

یہ حادثہ ایک فلائی اوور کی اس افتتاحی تقریب کے کچھ دیر بعد ہی رونما ہوا جس میں پنجاب کے وزیراعلیٰ میاں شہباز شریف کی موجودگی میں گیس سے بھرے غبارے اڑائے گئے تھے۔

دوسری جانب جنوبی پنجاب کے شہر وہاڑی میں ایک نکاسی آب کے ایک کنویں میں مرمت کا کام کرتے ہوئے تین سرکاری ملازمین سمیت چھ کارکن دم گھٹنے سے ہلاک ہوگئے ۔

یہ واقعہ اس وقت پیش آیا جب وہاڑی میں تحصیل میلسی کی ایک یونین کونسل کے ہیڈ کلرک سمیت تین اہکار نکاسی آب کا پنکھا ٹھیک کرنے کنویں میں اترے، پنکھا چلتے ہی کنویں میں گیس بھر گئی اور اہلکار بے ہوش ہوکر کنویں کے پانی میں گرگئے۔

انھیں بچانے کے لیے مزید پانچ مزدور کنویں میں اترے لیکن وہ بھی بے ہوش ہوگئے، امدادی عملے اور مقامی لوگوں نے ان کارکنوں کو کنویں سے نکال کر ہسپتال تک پہنچایا لیکن چھ افراد دم توڑ گئے جبکہ باقیوں کی جان بچا لی گئی۔

میلسی کے لوگوں کے احتجاج پر وزیراعلیٰ پنجاب نے تحقیقات کا حکم دیا ہے۔

اسی بارے میں