بلوچستان: تربت سے پانچ غیر ملکی بازیاب

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption بلوچستان میں اس سے قبل بھی غیر ملکیوں کے اغوا کے واقعات پیش آتے رہے ہیں

پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں حکام کے مطابق ایران سے متصل ضلع کیچ سے پانچ غیر ملکیوں کو بازیاب کر لیا گیا ہے۔

ان غیر ملکیوں کو منگل کے روز ضلعی ہیڈکوارٹر تربت سے بازیاب کیا گیا۔

تربت پولیس کے ایک اہلکار نے فون پر بی بی سی کو بتایا کہ پولیس کو شہر کی اوورسیز کالونی میں غیر ملکی مغویوں کی موجودگی کی اطلاع ملی تھی، جس کے بعد پولیس نے چھاپہ مار کر وہاں موجود پانچ غیر ملکیوں کو بازیاب کرا لیا۔

انھوں نے بتایا کہ بازیاب ہونے والے پانچ غیر ملکیوں میں سے تین کا تعلق تنزانیہ، ایک کا تعلق نائجیریا جبکہ ایک کا تعلق کینیا سے ہے۔ چھاپے کے دوران کسی قسم کی گرفتاری عمل میں نہیں آئی۔

پولیس اہلکار نے بتایا کہ غیر ملکیوں سے تفتیش جاری ہے۔

پولیس اہلکار نے یہ نہیں بتایا کہ ان غیر ملکیوں کو کس نے اغوا کیا اور اغوا کے محرکات کیا تھے۔

اس سے قبل بھی بلوچستان کے علاقے گوادر اور تربت سے غیر ملکی مغویوں کی بازیابی عمل میں آئی تھی۔

پہلے بازیاب ہونے والے بعض غیر ملکیوں کے بارے میں سرکاری ذرائع نے بتایا تھا کہ انھیں منشیات کے بین الاقوامی سمگلروں نے رقوم کی وصولی کو یقینی بنانے کے لیے یہاں رکھا تھا۔

بلوچستان کے پانچ اضلاع چاغی، واشک، پنجگور، کیچ اور گوادر کی سرحدیں ایران سے ملتی ہیں، اور بلوچستان افغان سرحد تقریباً نو سو کلومیٹر طویل ہے۔

دشوار گزار علاقوں پر مشتمل پاکستان اور ایران کی سرحدی پٹی منشیات کی سمگلنگ کا بڑا راستہ ہے۔

سرکاری حکام کے مطابق افغانستان میں منشیات کی پیدوار کو دیگر ممالک تک پہنچانے کے لیے زیادہ تر سمگلر یہی راستہ استعمال کرتے ہیں۔

اسی بارے میں