بلوچستان: رکن اسمبلی ہینڈری مسیح پولیس محافظ کے ہاتھوں قتل

تصویر کے کاپی رائٹ Provincial Assembly of Balochistan
Image caption حکام نے بتایا کہ ایم پی اے کو ہسپتال لے جایا گیا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے انتقال کر گئے

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کی صوبائی اسمبلی کے رکن ہینڈری میسح کو ان کی حفاظت پر تعینات پولیس اہلکار نے قتل کر دیا ہے۔

کوئٹہ میں ایس پی صدر محمود نوتیزئی نے بتایا کہ آج صبح شہر کے نواحی علاقے یوہنہ آباد میں ہینڈری مسیح کے گھر پر جب ان محافظ پہنچے تو دروازے پر ہی ان کی اور محافظ کے درمیان تلخ کلامی ہوئی جس کے بعد محافظ نے انھیں گولی مار دی۔

حکام نے بتایا کہ ایم پی اے کو ہسپتال لے جایا گیا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے انتقال کر گئے۔

کوئٹہ سے نامہ نگار محمد کاظم نے بتایا کہ ہینڈری مسیح بلوچستان اسمبلی کے اقلیتی رکن تھے اور ان کا تعلق بلوچستان میں مخلوط حکومت میں اتحادی جماعت نیشنل پارٹی سے تھا۔

پولیس کے مطابق لڑائی کے بعد ملزم پولیس اہلکار فرار ہوگیا ہے۔واقعے میں ہینڈری مسیح کے ایک قریبی رشتے دار بھی زخمی ہیں۔

درین اثنا ملک کے وزیراعظم میاں محمد نواز شریف اور صدر ممنون حسین نے اس واقعے کی شدید مذمت کی ہے اور ہینڈری میسح کے لواحقین اظہارِ تعزیت بھی کیا ہے۔

وزیراعظم نے آئی جی ایف سی کو ہدایت جاری کی ہے کہ وہ قصورواران کی نشاندہی اور انھیں پکڑنے میں بلوچستان حکومت کی مدد کریں۔ وزیراعظم نے بلوچستان حکومت سے فوری کارروائی کے لیے بھی کہا ہے۔

اسی بارے میں