’متاثرینِ شمالی وزیرستان کی مدد کے لیے فوج اور حکومت متحد ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption وزیراعظم نے کہا کہ حکومت کو نقل مکانی کرنے والے خاندانوں کی مشکلات کا اندازہ ہے

پاکستان کے وزیرِ اعظم نواز شریف کا کہنا ہے کہ شمالی وزیرستان میں جاری فوجی آپریشن کے باعث نقل مکانی کرنے والے متاثرین کی مشکلات کے حل کے لیے فوج اور حکومت مل کر کام کر رہے ہیں۔

جمعے کو بنوں کے دورے کے موقعے پر انھوں نے ہر خاندان کے لیے امدادی پیکیج کو بڑھا کر 20 ہزار روپے کرنے کا اعلان کیا۔ انھوں نے کہا کہ اس کے علاوہ رمضان المبارک کے دوران ہر خاندان کو 20 ہزار روپے کا خصوصی الاؤنس بھی دیا جائے گا۔

’امدادی کارروائیاں مکمل طور پر کنٹرول میں ہیں‘

’نقل مکانی کرنے والوں کی تعداد چار لاکھ سے زیادہ‘

وزیراعظم نواز شریف نے شمالی وزیرستان سے نقل مکانی کرنے والے افراد کو ہرممکن امداد کی فراہمی کا یقین دلایا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ حکومت کو نقل مکانی کرنے والے خاندانوں کی مشکلات کا اندازہ ہے اور فوجی اور سول حکام متاثرہ خاندانوں کو ریلیف کی فراہمی کے لیے مل کر کام کر رہے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ نقل مکانی کرنے والے ان افراد کی سہولت کے لیے تمام وسائل بروئے کار لائے جائیں گے جنھوں نے دہشت گردوں کی جانب سے حکومتی عمل داری چیلنج کیے جانے کے باعث اپنے گھر بار چھوڑے۔

نواز شریف نے کہا کہ شمالی وزیرستان میں امن کے قیام کے بعد نقل مکانی کرنے والے افراد کی اپنے گھروں کو محفوظ اور پرامن واپسی یقینی بنائی جائے گی۔

اس سے پہلے وزیر اعظم کو متاثرین کے لیے قائم امدادی کیمپوں میں کیے گئے انتظامات کے بارے میں آگاہ کیا گیا۔ انھوں نے فوج کے افسران اور جوانوں سے بھی ملاقات کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption شمالی وزیرستان آپریشن کی وجہ سے چھ تحصیلوں سے چار لاکھ سے زائد افراد بے گھر ہونے پر مجبور ہوچکے ہیں

وزیرِ اعظم کے دورے کے موقعے پر بنوں کینٹ کے علاقے میں سکیورٹی انتہائی سخت کی گئی تھی اور شہر میں زیادہ نقل و حمل پر پابندی تھی۔ مقامی صحافیوں کے مطابق شہر بند ہونے کی وجہ سے شہریوں کو مسائل کا سامنا رہا۔

اس دورے میں فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف، وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید، سیفران کے وفاقی وزیر عبدالقادر بلوچ ، وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک اور گورنر خیبر پختونخوا سردار مہتاب احمد خان بھی ان کے ہمراہ تھے۔

قبائلی شمالی وزیرستان میں فوج کی طرف سے جاری آپریشن ضرب عضب شروع ہوئے دو ہفتے ہونے کو ہیں۔ اس آپریشن کی وجہ سے شمالی وزیرستان کی چھ تحصیلوں سے چار لاکھ سے زائد افراد بے گھر ہونے پر مجبور ہو چکے ہیں۔

متاثرین کے لیے حکومت کی طرف سے ایف آر بکاخیل کے علاقے میں ایک کیمپ بنایا گیا ہے لیکن انتظامات کے فقدان کے باعث وہاں اب تک صرف 100 کے قریب افراد نے پناہ لی ہے۔

زیادہ تر متاثرہ خاندان بنوں اور آس پاس کے اضلاع میں اپنے طور پر کرائے کے مکانات، رشتہ داروں اور دوستوں کے ہاں پناہ لینے پر مجبور ہوئے ہیں۔

ادھر پاکستان فوج کے ترجمان لیفٹیننٹ جنرل عاصم باجوہ نے کہا ہے کہ شمالی وزیرستان میں جاری آپریشن بلا کسی امتیاز کے تمام شدت پسندوں گروپوں کے خلاف کیا جا رہا ہے۔

گذشتہ روز صحافیوں کو بریفنگ دیتے ہوئے انھوں نے کہا کہ کہ آپریشن میں ’اچھے طالبان ہے یا برے طالبان‘ کا امتیاز نہیں رکھا جا رہا ہے بلکہ یہ سب کے خلاف ہو رہا ہے۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ آپریشن کے دوران اب تک 327 عسکریت پسند مارے گئے ہیں جب اس دوران دس سکیورٹی اہلکار بھی ہلاک ہوچکے ہیں۔

اسی بارے میں